حکومت کا بڑا جرم آئی ایم ایف معاہدہ چھپانا ہے، لیاقت بلوچ

87

لاہور(نمائندہ جسارت) نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان اور سابق پارلیمانی لیڈر لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ حکومت کا بڑا جرم یہ ہے کہ آئی ایم ایف سے مذاکرات اور معاہدہ عوام سے چھپایا جارہاہے ۔ آئی ایم ایف کے نمائندے ہی آئی ایم ایف سے معاملات کر رہے ہیں ، عمران حکومت بس عملدرآمد کی ڈیوٹی پر ہے۔ان خیالات کا اظہا رانہوں نے منصورہ میں سیاسی جماعتوں کے نمائندہ وفد اورسابق بلدیاتی کونسلرز کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔لیاقت بلوچ نے کہا کہ آئی ایم ایف معاہدے کی خوفناکی آہستہ آہستہ تھیلے سے باہر آرہی ہے ۔ ڈالر ، بجلی ، گیس ، تیل ، مہنگائی اور ٹیکسوں میں مزید اضافہ قومی معیشت کی جان نکال دے گا۔ انہوں نے کہاکہ12 مئی سانحہ کراچی پاکستان کی سیاسی تاریخ کا سیاہ ، بدقسمت اور وحشیانہ دن تھا ۔آمر اور دہشت گرد ہاتھوں میں ہاتھ ڈال کر انسانوں کے لاشے تڑپا رہے تھے ۔ آمر پرویز مشرف نے مکے لہرا کر جرم کا اعتراف کیا لیکن آج تک شہدا کے وارثوں کو انصاف نہیں مل سکا ۔ زرداری ، نواز کے بعد اب عمران حکومت بھی چپ سادھے ہوئے ہے ۔سانحہ بلدیہ اور سانحہ 12 مئی نے ہی کراچی کے عوام کو ظلم کی طویل رات دی ۔ لیاقت بلوچ نے کہاکہ پنجاب میں قبل از وقت بلدیاتی اداروں کا توڑنا غیر جمہوری عمل ہے ۔ ہر بلدیاتی نظام کی تشکیل کے موقع پر حکمران دعوے دار ہوتے ہیں کہ مسائل عوام کی دہلیز پر حل ہوں گے لیکن جب سیاسی جمہوری حکومتوں کے نزدیک بلدیاتی ترجیح نہ ہو تو بے اختیار بلدیاتی نظام بے ثمر رہتاہے ۔ انہوںنے کہاکہ جماعت اسلامی بلدیاتی انتخابات میں فعال حصہ لے گی۔