پاکستان ہمیشہ قائم و دائم رہے

28

وطن کے لیے جذبہ محبت رکھنا ایک فطری عمل ہے یہ قوم کو اپنا ملک قائم و دائم رکھنے کے لیے اس کی محبت ہر محبت سے زیادہ عزیز تر ہو، تو ملک و قوم دنیا میں ترقی کی منزلیں طے کرتے رہیں گے۔ لیکن جہاں رنگ و نسل، علاقہ پرستی، فرقہ واریت، لسانیت سر چڑھ کر بولنے لگ جائیں تو ملک کی جڑیں کمزور اور امن و سکون کو شدید خطرات لاحق ہوجاتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ کے پسندیدہ دین دین اسلام کو پاکستان میں نافذ کرنے کے لیے حاصل کیا گیا ہے اور اس ملک کی بقا بھی اسی میں ہے تب ہی اس خطہ زمین پر اللہ تعالیٰ نے بے شمار قدرتی وسائل دے رکھے ہیں۔ پاکستان میں نوجوان دنیا بھر میں سب سے زیادہ ہیں، لہٰذا ان کو نظر انداز بالکل نہیں کرنا ہے۔ ان میں اسلامی ضابطہ حیات زندگی کو خوبصورتی سے بیان کرنا تا کہ عمل پیرا ہوسکیں، اپنے ملک و قومی اتحاد کو اجاگر کرنا بے حد لازم ہے، آج پاکستان کو بہت سے مسائل درپیش ہیں۔ جن میں بیرونی خطرات تو ہیں ہی لیکن افسوس کی بات ہے اس کے اندرونی ناچاقیاں بڑھتی جارہی ہیں۔ اس لیے ہمارے بزرگوں ے اپنی جانیں قربان نہیں کی تھیں، اپنی زمین و جائداد نہیں چھوڑی تھیں، ابھی بھی وقت ہے ہم سب مسلمان ہیں، ایک وطن کے شہری ہیں، اپنی اپنی برائیاں خود ختم کرنے کا عہد کرلیں تو اللہ تعالیٰ بھی ہماری مدد کرے گا۔ اللہ تعالیٰ سے دُعا ہے پاکستان کو تا قیامت استحکام دے، اس میں رہنے بسنے والے مسلمانوں کو اپنے دین کا سچا پیروکار بنالے، ان پر اپنی رحمت خاص کرتا رہے آمین۔
سائرہ بانو، کورنگی شرقی

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.