لیبیا :باغی فوج کا تیل کی بر آمدی بندرگاہوں سے انخلا

76
لیبیا: فوجی بندرگاہ پر کھڑے آئل ٹینکر اور تباہ شدہ کنویں دیکھ رہے ہیں
لیبیا: فوجی بندرگاہ پر کھڑے آئل ٹینکر اور تباہ شدہ کنویں دیکھ رہے ہیں

طرابلس (انٹرنیشنل ڈیسک) لیبیامیں خلیفہ حفتر کی زیرقیادت باغی فوج نے تیل کی برآمدی بندرگاہوں سے انخلا شروع کردیا۔ لیبیا کی نیشنل آئل کارپوریشن کے سربراہ مصطفی صنالہ نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ مشرقی شہروں میں برسرپیکار باغی فوج کی جانب سے تیل کی برآمدی بندرگاہوں سے انخلا کے بعد کمپنی نے 4بندرگاہوں کا کنٹرول سنبھال کر اسے برآمد کے لیے کھول دیاہے۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ راس لانوف، سدرہ، زویتینہ اور حریقہ کی بندرگاہوں پر جلد ہی معمولات بحال ہوجائیں گے۔ کمپنی نے باغی فوج کے سربراہ خلیفہ حفتر کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ انہوں تمام اختلافات کو بالائے طاق رکھ کر ملکی مفاد میں بندرگاہ خالی کرنے کا فیصلہ کیا۔ خبررساں اداروں کے مطابق خلیفہ حفترنے 2ہفتے قبل دھمکی دی تھی کہ وہ بندرگاہوں کو مشرقی لیبیا کی ایک آئل کمپنی کے حوالے کردیں گے، جو تیل کی آمدنی کا بڑا حصہ باغی ملیشیاؤں کو دے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ