سندھ میں تاحال صوبائی مالیاتی کمیشن ایوارڈ جاری نہیں ہوسکا،توفیق وسان 

64

کراچی(اسٹاف رپورٹر)سی پی ڈی آئی اور دی چیج آرگنائزیشن کراچی نے سندھ مالیاتی کمیشن ایوارڈ میں تاخیر پر تشویش کا اظہارکیاہے۔2013ء میں لوکل گورنمنٹ ایکٹ پاس ہونے کے باوجود سندھ میں تاحال صوبائی مالیاتی کمیشن ایوارڈ جاری نہیں ہوسکا۔سی پی ڈی آئی سندھ کے صوبائی کوآرڈینیٹر توفیق وسان اور دی چیج آرگنائزیشن کراچی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹراسحاق سومرونے اس حوالے سے سول سوسائٹی کا موقف بیان کرتے ہوئے کہاکہ اختیارات کی نچلی سطح تک منتقلی اس وقت تک نامکمل ہے جب تک انتظامی اکائیوںیعنی اضلاع کے مابین مالیاتی شراکت کے تعین کا کوئی فارمولا تشکیل نہیں پاجاتا۔توفیق وسا ن نے مزید بتایاکہ 24 نومبر 2016 ء کوسندھ حکومت کی جانب سے صوبائی مالیاتی کمیشن تشکیل دیا گیا لیکن آج ایک سال گذرجانے کے باوجودصوبائی مالیاتی کمیشن ایوارڈنہیںآسکا۔سندھ میں گزشتہ مالیاتی ایوارڈ 2008 میں جاری کیاگیاتھا۔سندھ لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2013 ء کی دفعہ 113 (1) صوبائی مالیاتی کمیشن کے متعلق ہے جس کاکامنصوبہ واضلاع کے درمیان اورمقامی کونسلوں کے مابین مالیاتی تقسیم کا فارمولاوضع کرناہے صوبائی حکومت ابھی تک اس قانون پر عمل درآمدکرنے میں ناکام رہی ہے،انھوں نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیاکہ وہ جلدازجلد پی ایف سی ایوارڈکے اعلان کو یقینی بنائے۔آئین پاکستان کے آرٹیکل 140- اے کاحوالہ دیتے ہوئے دی چیج آرگنائزیشن کراچی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر اسحاق سومرونے کہا کہ صوبائی مالیاتی کمیشن کا قیام مقامی حکومتوں کے منتخب نمائندوں کومالیاتی ذمہ داری اور اختیارات کی منتقلی کے لیے انتہائی ضروری ہے۔ انھوں نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنی آئینی اور قانونی ذمہ داری پوری کرے۔اسحاق سومرواورتوفیق وسان نے امیدظاہرکی کہ سندھ حکومت صوبائی مالیاتی کمیشن کی طرف سے جلد از جلد فارمولے کے تعین کو یقینی بناتے ہوئے مقامی حکومتوں کوصوبائی قبل تقسیم فنڈ سے اپنے حصے کے استعمال کے متعلق خودمختاری دے کر مقامی حکومتوں کے نظام کو مزید مستحکم کرے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ