ہیٹ ویو اور لوڈشیڈنگ نے شہریوں کا برا حال کردیا

37

 

کراچی (اسٹاف رپورٹر) کراچی میں شدید اور مختلف علاقوں میں بجلی بریک ڈاؤن نے شہریوں کو اذیت میں مبتلا کر دیا۔شہر کے مختلف علاقوں بریک ڈاؤن سے 14 ، 14 گھنٹے تک بجلی غائب رہی ۔ کے الیکٹرک بجلی کی ڈیمانڈ پوری میں کرنے تاحال ناکام ہے اور لوڈشیڈنگ کی معلومات فراہم کرنے میں بھی کے الیکٹرک کوئی مؤثر انتظام نہیں کر پائی ۔ محکمہ موسمیات کی جانب سے ہیٹ ویو الرٹ سے کے الیکٹرک کو بھی آگاہ کیا گیا ہے تاکہ وہ ان دنوں میں لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم کرے تاکہ کوئی نقصان نہ ہوسکے۔شہر کے مختلف علاقوںگلشن اقبال، گلشن اقبال اسکیم 33کے مختلف علاقوں کوئٹہ ٹاؤن، پاپوش نگر ، گلستان جوہر ، اورنگی ٹاؤن میں14،14 گھنٹوں سے زائد کی لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے۔ کورنگی، بلدیہ ٹاؤن، سعید آباد، عزیز آباد، لیاقت آباد، نارتھ کراچی ، ناظم آباد، نارتھ ناظم آباد، نصرت بھٹو کالونی ، ملیر ،لانڈھی اور دیگر علاقوں میںکئی کئی گھنٹے تک غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے ۔شہریوں کی جانب سے لوڈشیڈنگ کے خلاف شدید احتجاج کرنے کا عندیہ دیا گیا ہے۔ کے الیکٹرک کی جانب سے معلومات فراہم کے لیے دیا گیا نمبر بھی غیر فعال رہا اور شہریوں کی جانب سے شکایت سامنے آئی کہ کے الیٹرک نے جو نمبر دیا ہے اس پر جب لوڈشیڈنگ کے متعلق معلومات کے لیے کال کرتے ہیں تو کمپوٹر بولتا رہتا ہے لیکن کال کوئی اٹینڈ نہیں کرتا ہے جس کے باعث موبائل بیلنس بھی کٹتا ہے اور معلومات بھی حاصل نہیں ہوپاتیں ۔کے الیکٹرک کے ترجمان کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق کراچی میں گرمی کی وجہ سے ڈیمانڈ میں اضافہ ہوا ہے۔کے الیکٹرک ڈیمانڈ پوری کرنے میں مکمل کوشاں ہے۔گیس پریشر میں کمی کے باعث کچھ پلانٹس کی پیداواری صلاحیت متاثر ہے۔ کچھ جگہوں پر جزوی لوڈ مینجمنٹ کی جارہی ہے جس کے لیے معذرت خواہ ہیں۔ محکمہ موسمیات کے ڈائر یکٹر سردار سرفراز کے مطابق سمندر ی طوفان سے کراچی کو فی الحال کوئی خطرہ نہیں ہے اور شہر میں گزشتہ کئی روز سے گرمی کے باعث مزید تبدیلیوں کا امکان ہے اور امکان ہے کہ کسی بھی وقت مختلف علاقوں میں بوندا باندی ہو اور شہر میں رات کے اوقات میں گرد آلود ہوائیں چل سکتی ہیں ۔جمعرات کو شہر میں زیادہ سے زیادہ سے درجہ حرارت 42 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا اورہوا میں نمی کا تناسب 82 فیصد رہا۔