دھاندلی میں ایف سی ،رینجرز،الیکشن کمیشن ملوث ہے،جے یو آئی نے پہیہ جام کی دھمکی دیدی 

86

اسلام آباد(صباح نیوز+مانیٹر نگ ڈ یسک)جمعیت علمائے اسلام (ف)نے انتخابی دھاندلی کے خلاف ملک گیر پہیہ جام کی دھمکی دے دی۔ہفتے کو اسلام آباد میں جمعیت علمائے اسلام (ف)کے سیکرٹری جنرل وسابق ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سینیٹر مولانا عبدالغفور حیدری نے سابق وفاقی وزیر مولانا امیر زمان و پارٹی کے دیگر رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس میں 25جولائی کو ہونے والے عام انتخابات میں کی گئی دھاندلی کے شواہداور ثبوت جاری کرتے ہوئے الزام عاید کیا کہ اسٹیبلشمنٹ نے کھل کر انتخابات میں مداخلت کی ،پہلے تواسٹیبلشمنٹ خفیہ سپورٹ کرتی تھی مگر اس بار تو ننگی مداخلت کے ذریعے پسند کی جماعتوں اور شخصیات کو انتخاب جتوایا گیا، دھاندلی میں ایف سی ، رینجرز،الیکشن کمیشن ملوث ہے۔ چیف جسٹس کو انتخابات سے متعلق معاملے کا بھی نوٹس لینا چاہیے تھا کیونکہ دھاندلی ہوئی ہے،اس عمل میں ایف سی، رینجرز اور الیکشن کمیشن ملوث تھا اور ہمیں ہرا کر آپ نے ملک کا نقصان کیا،ہم سیاسی لوگ ہیں، ہم نے مشرف کا مقابلہ کیا اور آج پرویز مشرف ملک واپس نہیں آرہے ہیں،مولانا فضل الرحمن پر تنقید ہو رہی ہے کہ انہوں نے فوج کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ اس طرح نہ کریں،مولانا نے بالکل درست کہا ہے کیونکہ ادارے ہر لحاظ سے قابل احترام ہیں اور ہم آرمی کا جتنا احترام کرتے ہیں شاید ہی کوئی کرتا ہو۔مولانا عبدالغفور حیدری نے یوم آزادی کے حوالے سے مولانا فضل الرحمن کے بیان پر ہونے والی تنقید کو رد کرتے ہوئے کہا ہے کہہم کسی شخص یا ادارے کے مخالف نہیں لیکن اگر یہ ادارہ ایک جماعت کو جتوا رہا ہے تو اس ادارے نے خود اختیارات سے تجاوز کیا ہے،اگر ایک ادارہ حدود سے نکل کر سیاست کرے گا تو پھر ایسا کہا جائے گا،مولانا فضل الرحمن نے 14 اگست کے حوالے سے غلط بات نہیں کی اور یوم آزادی منانے سے منع نہیں کیا بلکہ جو کچھ کہا درست ہی کہا ہے اور ہم 14 اگست منائیں گے۔انہوں نے کہا کہ الیکشن کے روز 4 بجے کے قریب ووٹرز کے نہ آنے کا بہانہ بنا کر پولنگ ایجنٹس کو اسٹیشن سے باہر جانے کا کہہ دیا گیا، ایف سی براہ راست الیکشن کے اس عمل میں شامل تھی اورایف سی والے ہاتھ پکڑ کر مہر لگانے کا کہہ رہے تھے،من پسند شخصیات کو جتوانے کا کام ایف سی کے ذمے لگایا گیا تھا۔ مولانا عبدالغفور حیدری نے انتخابات پر شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ تحریک انصاف نے بھی سندھ میں تحفظات کا اظہار کیا ہے جبکہ دیگرتمام جماعتوں نے مل کر انتخابات کو مسترد کیا ہے تو ایسی صورت حال میں اس الیکشن کی بنیاد پر بننے والی حکومت کی کیا پوزیشن ہوگی ۔قبل ازیں عام انتخابات کے دوران جبری مہریں لگانے ،سادہ کاغذوں پر انتخابی نتائج دینے جعلی بیلٹ پیپرزو ہزاروں شناختی کارڈز کی موجودگی کی تھانوں میں درج ایف آئی آرز متعدد پولنگ اسٹیشنوں پر 100فیصد سے زائد پولنگ ہونے بڑی تعداد میں پولنگ اسٹیشنوں پر خواتین کے ووٹ پول نہ ہونے کے ثبوت میڈیا کو پیش کیے گئے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.