آزاد کشمیر میں چہلم امام حسین علیہ السلام مذہبی جوش وخروش سے منایا گیا

70

چہلم امام حسین علیہ السلام مذہبی جوش وخروش اور عقیدت و احترام سے منایا گیا ،مظفرآباد ، کوٹلی ، میرپور ، باغ ، جہلم ویلی سمیت پاکستان و  دُنیا بھر میں جلوس چہلم نکالے گئے۔ ریاستی دارالحکومت مظفرآباد میں مرکزی انجمن جعفریہ کے زیر اہتمام بعد ازنماز ظہرین جلوس چہلم امام عالی مقام نکالا گیا۔ عزاداروں ، نوحہ خوان سنگتوں سمیت مُحبان آل محمدۖ نے شہدائے کربلا کی قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کیا۔ اور اس عزم کا اعادہ بھی کیا گیا ، کہ سُنت امام عالی مقام پر عمل کرتے ہوئے دہشتگردی کی تمام اقسام کی مکمل طور پر نفی کی جاتی رہیگی اور دُنیا بھر کے مظلومین و محکومین پر روا رکھے گئے طاغوتی و صہیونی مظالم کیخلاف آواز بلند کی جاتی رہیگی ۔

تفصیلات کمیطابق ریاستی دارالحکومت مظفرآباد سمیت آزادکشمیر میں بسلسلہ چہلم شہادت حضرت امام حسین علیہ السلام مجالس عزاء و جلوس اور چہلم کا انعقاد کیا گیا ، جبکہ مقبوضہ کشمیر میں ہندوستانی ریاستی دہشتگردی کیوجہ سے مجالس و جلوس ہا چہلم سبوتاژ کئے گئے ۔ حریت کانفرنس کے لیڈران زیرحراست یا نظر بند ہیں۔ ریاستی دارالحکومت مظفرآباد ، کوٹلی ، میرپور ، باغ ، جہلم ویلی میں حسب سابق مجالس چہلم اور جلوس ہا چہلم کا انعقاد ہوا۔

آزاد کشمیر کا سب سے بڑا جلوس چہلم امام حسین حسب سابق مرکزی امام بارگاہ پیرعلم شاہ بخاری مظفرآباد سے برآمد ہوا  بعد ازنماز ظہرین مرکزی انجمن جعفریہ کے تحت برآمد ہونیوالے جلوس چہلم میں بڑی تعداد میں محبان وعقید ت مندان محمدﷺ و آل محمدﷺ ، ماتمی سنگتیں شریک ہوئیں ، جلوس چہلم کی برآمدگی سے قبل حسب سابق مرکزی امام بارگاہ میں مجلس چہلم کا انعقاد ہوا ، ذاکر اہلبیت سیدصدق حسین کاظمی  زعیم ملت مفتی کفایت حسین نقوی نے فضائل مناقب اور مصائب آل محمد بیان کئے ، جبکہ ایک قرار داد کے ذریعے مقبوضہ کشمیر میں پونے دوماہ سے جاری ہندوستانی بربریت کی مذمت کی گئی۔

اور حکومت پاکستان پر زور دیا جائیگا ،کہ وہ پاکستان میں بِلاامتیاز انصاف کی فراہمی یقینی بنائے ،تاکہ قومی سلامتی کا تحفظ ممکن ہوسکے۔قرارداد میں بزرگ سماجی شخصیت شیخ محسن علی نجفی کیخلاف وزارت داخلہ کے روا رکھے گئے امتیازی سلوک  کی پُرزور مذمت کی گئی ۔ جلوس چہلم کے موقع پر ضلعی انتظامیہ ،پولیس کے ذمہ داران ،بلدیہ ،بم ڈسپوزل اسکواڈ،ریسکیو 1122،شہری دفاع کے رضاکار ان بھی ہمراہ رہیں گے۔جبکہ قومی سلامتی کے ذمہ دارحکام بھی جلوس کی مانیٹرنگ کرتے رہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ