پاناما: اٹلی کے دباؤ پر امدادی جہاز کی رجسٹریشن منسوخ

79
پیرس: ایکوریس بحیرۂ روم میں تارکین وطن کو بچا رہا ہے (فائل فوٹو)‘ امدادی تنظیموں کے نمایندے پاناما کی بحریہ کے فیصلے پر ردعمل دے رہے ہیں
پیرس: ایکوریس بحیرۂ روم میں تارکین وطن کو بچا رہا ہے (فائل فوٹو)‘ امدادی تنظیموں کے نمایندے پاناما کی بحریہ کے فیصلے پر ردعمل دے رہے ہیں

پیرس (انٹرنیشنل ڈیسک) پاناما حکام نے اطالوی حکومت کے دباؤ پر بحیرۂ روم میں مہاجرین کو بچانے کے لیے سرگرم ایکوریس ٹو جہاز کی رجسٹریشن منسوخ کردی۔ فلاحی تنظیموں کا کہنا ہے کہ اس اقدام کی ذمے دار اطالوی حکومت ہے۔ ایکوریس ٹو وسطی بحیرہ روم میں مہاجرین کی کشتیوں کی گزرگاہ پر امدادی کارروائیاں انجام دینے والا اپنی نوعیت کا آخری جہاز ہے۔ اس جہاز کی انتظامیہ کو اتوار کے روز پاناما میری ٹائم اتھارٹی کی جانب سے بتایا گیا تھا کہ اس کی رجسٹریشن منسوخ کر دی جائے گی۔ اس اقدام سے لیبیا کے ساحل سے دور مہاجرین کے لیے کی جانے والی تمام امدادی کارروائیوں پر اثر پڑے گا، تاوقتے کہ یہ جہاز کسی اور نام سے رجسٹر نہیں ہوتا۔ ایکوریس ٹو کو چلانے والی فلاحی تنظیموں میں سے ایک ایس او ایس میڈیٹیرینین نے پاناما حکومت کے اس اقدام پر تنقید کرتے ہوئے اسے روم حکومت کی جانب سے دباؤ کا شاخسانہ قرار دیا ہے۔ تنظیم نے ایک بیان میں کہا کہ ہفتے کے روز پاناما حکومت کی جانب سے ملنے والے اس پیغام کو جان کر بہت حیرت ہوئی، جس میں کہا گیا تھا کہ اطالوی حکام نے پی ایم اے کو ایکوریس کے خلاف فوری ایکشن لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ تنظیم نے اپنی شریک تنظیم ڈاکٹرز ود آؤٹ بارڈرز کے نمایندوں کے ساتھ پیر کے روز پریس کانفرنس میں اس اقدام کی شدید مذمت کی۔ واضح رہے کہ یہ جہاز فی الوقت امدادی کارروائیوں کے نتیجے میں بچائے جانے والے 58 مہاجرین سمیت سمندر ہی میں ہے اور بندرگاہ پہنچنے پر اسے ڈی فلیگ کر دیا جائے گا۔ ایس او ایس میڈیٹیرینین نے اپنی شریک کار فلاحی تنظیم ’ڈاکٹرز وِد آؤٹ بارڈرز‘ کے ساتھ مل کر یورپی حکومتوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ پاناما حکومت پر زور دیں کہ یا تو ایکوریس ٹو کی رجسٹریشن بحال کی جائے اور یا پھر اسے نیا فلیگ جاری کیا جائے۔ دوسری جانب اطالوی وزیر داخلہ ماتیو سالوینی نے اٹلی کی جانب سے دباؤ کی خبروں کا انکار کیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ