دہشتگرد پاکستان پر حملہ کرکےافغانستان میں چھپتے ہیں ، برطانوی وزیر خارجہ

58

برطانوی وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ  دہشت گرد پاکستان میں حملہ کر کے مشرقی افغانستان میں چھپ جاتے ہیں جبکہ مشیر خارجہ نے کہا ہے کہ افغان مصالحتی عمل میں پاکستان، امریکہ، چین کا کردار سہولت کار کا ہے۔

منگل کو برطانوی وزیر خارجہ فلپ ہمنڈ کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ افغان طالبان کے ساتھ مذاکرات کا اگلا دور چند ہفتوں میں متوقع ہے افغان مصالحتی عمل میں پاکستان، امریکہ، چین کا کردار سہولت کار کا ہے  طالبان سے جو بھی بات چیت ہو گی وہ افغان حکومت کے ساتھ ہو گی۔

اس موقع پر برطانوی وزیر خارجہ فلپ ہمنڈ نے کہا کہ پاکستان کے ساتھ ہر شعبے میں طویل المدتی تعاون بڑھانا چاہتے ہیں پاکستان میں ترقیاتی منصوبوں کی حمایت جاری رکھنے کیساتھ ساتھ دہشت گردی اور انتہاء پسندی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے ساتھ ہیں۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم کے مشیر برائے خارجہ امورسرتاج عزیز نے کہا کہ مختلف شعبوں میں تعاون پر برطانیہ کے شکرگزار ہیں، افغان مہاجرین کے مسئلے سے نمٹنے کیلئے پوری کوشش کر رہے ہیں،مہاجرین کا مسئلہ سیاسی، معاشی ہر طرح سے اہم ہے۔

برطانوی وزیر خارجہ فلپ ہمنڈ نے اس بات کا اعتراف کیا کہ دہشت گرد مشرقی افغانستان سے پاکستان پر حملہ کرتے ہیں اور واپس چھپ جاتے ہے اس موقع پر انہوں نے پاکستان پر زور دیا کہ  پاکستان پٹھان کوٹ حملہ کیس کی تحقیقات میں پیش رفت سے آگاہ رکھے گا ۔

فلپ ہمنڈ نے خواتین کے حقوق کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ خواتین کے عالمی دن کے موقع پر پاکستان کا دورہ کر رہا ہوں اور پنجاب میں اسمبلی میں جو خواتین کے حقوق کا بل پاس کیا گیا ہے وہ قابل تعریف اقدام ہے جبکہ شرمین عبید چنائے نے غیرت کے نام پر قتل کے موضوع پر فلم بنا کر بہترین کام کیا۔

مشترکہ پریس کانفرنس سے قبل مشیر خارجہ نے برطانوی وزیر خارجہ فلپ ہمنڈ سے ملاقات کی ، ملاقات میں  انسداد دہشت گردی کے معاملات پر بات چیت ہوئی جبکہ افغانستان میں امن عمل اور پاک بھارت مذاکرات کے مستقبل سے متعلق بھی گفتگو کی گئی۔

حصہ