بھارت کی طرف سے جموں کشمیر کی ڈیمو گرافی تبدیل کا نوٹس لیا جائے،کل جماعتی کانفرنس

109
اسلام آباد: جماعت اسلامی آزاد کشمیر کے تحت کل جماعتی کشمیر مشاورتی کانفرنس سے صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خطاب کررہے ہیں، ڈاکٹر خالد محمود، عبدالرشید ترابی، شاہ غلام قادر، غلام محمد صفی ودیگر بھی شریک ہیں
اسلام آباد: جماعت اسلامی آزاد کشمیر کے تحت کل جماعتی کشمیر مشاورتی کانفرنس سے صدر آزاد کشمیر سردار مسعود خطاب کررہے ہیں، ڈاکٹر خالد محمود، عبدالرشید ترابی، شاہ غلام قادر، غلام محمد صفی ودیگر بھی شریک ہیں

اسلام آباد(صباح نیوز) جماعت اسلامی آزاد جموں وکشمیر کے زیر اہتمام آزادکشمیر مقبوضہ کشمیر کی سیاسی جماعتوں کی کل جماعتی مشاورتی کانفرنس میں حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ آزادکشمیر کی مسلمہ قیادت اور حریت قیادت کی مشاورت اور ان کو اعتماد میں لے کر مسئلہ کشمیر پر بین الاقوامی سفارتی مہم شروع کی جائے، جس میں کشمیریوں کو بنیادی فریق کے طور پر شامل کیا جائے ،کانفرنس نے جموں وکشمیر کو ناقابل تقسیم وحدت قرار دیتے ہوئے کہا کہ ریاست جموں وکشمیر کے عوام رائے شماری کے ذریعے اپنے مستقبل کا فیصلہ کریں گے، بھارت کی طر ف سے جموں و کشمیر کی ڈیموگرافی کو تبدیل کرنے کے منصوبے کا نوٹس لیا جائے ،کل جماعتی کانفرنس میں فیصلہ کیا گیا کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم آزادکشمیر اور پاکستان پر بھارتی جارحیت ،جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر پر پابندی کے خلاف غیر معمولی احتجاج کیا جائے گا جس میں آزادکشمیر کی تمام جماعتیں شامل ہوں گی۔کل جماعتی کانفرنس کی صدارت جماعت اسلامی آزادجموں وکشمیر کے امیر ڈاکٹر خالد محمود خان نے کی جبکہ مہمان خصوصی صدر ریاست آزاد جموں وکشمیر سردار مسعود خان تھے ۔صدر ریاست آزاد جموں وکشمیر سردار مسعود خان نے کہا کہ پلوامہ حملے کے بعد پاکستان کو ایک موقع ملا ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کے خلاف بھارت پر عالمی دباؤ بڑھائے۔ انہوں نے کہاکہ کشمیر دو طرفہ تنازع نہیں بلکہ سہ فریقی تنازع ہے کشمیریوں کی رائے اور مشاورت کے بغیر اس تنازعے کا حل پائیدار نہیں ہو گا ،کشمیری عوام رائے شماری کے ذریعے اپنے مستقبل کا فیصلہ کریں گے۔انہوں نے کہاکہ آزادی کی جدوجہد میں کشمیریوں نے لاکھوں افراد کی قربانیاں دی ہیں۔آزادکشمیر کے صدر نے کہا کہ مودی کی حماقتوں کی وجہ سے کشمیر کا مسئلہ دنیا بھر میں اجاگر ہوا ہے ،دنیا کی توجہ مسئلہ کشمیر پر ہے، حکومت پاکستان مسئلہ کشمیر کو میز کے درمیان میں رکھے اور دنیا سے مدد لینے کی کوشش کرے ۔مسعود خان نے کہاکہ بھارت آزادکشمیر میں سرجیکل اسٹرائیک میں ناکام ہوا، افواج پاکستان نے بھارتی جارحیت کا بھرپور جواب دیا۔مسعود خان نے کہاکہ بھارت انتخابات سے پہلے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کے متعلق دفعہ 370اور 35اے کو منسوخ کرسکتا ہے اس طرح بی جے پی کو ووٹ حاصل ہوسکتے ہیں، کشمیریوں کو ہر صورت حال کے لیے تیار رہنا ہو گا ۔انہوں نے کہاکہ عمر عبداللہ،فاروق عبداللہ اور محبوبہ مفتی کے بیانات کو اہمیت نہیں دینی چاہیے، سید علی گیلانی ،میرواعظ عمرفاروق،یاسین ملک،شبیر شاہ،آسیہ اندرابی ہمارے قائدین ہیں ۔کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جماعت اسلامی آزاد جموں وکشمیر کے امیر ڈاکٹر خالد محمود خان نے حکومت پاکستان سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ آزادکشمیر کی مسلمہ قیادت اور حریت کانفرنس کو اعتماد میں لے کر مسئلہ کشمیر پر بین الاقوامی سفارتی مہم شروع کی جائے ،جس میں کشمیریوں کوبنیادی فریق کے طور پر شامل کیا جائے۔ انہوں نے کہاکہ آزادکشمیر کی تمام سیاسی جماعتوں پر مشتمل کل جماعتی کشمیر رابطہ کونسل کے تحت جلد ہی مظفرآباد میں بڑا احتجاجی مظاہر ہ کیا جائے گا ، دوسرے مرحلے پر اسلام آباد میں بھی بڑا احتجاجی مظاہر ہ کیا جائے گا۔ ڈاکٹر خالد محمود نے کہاکہ مقبوضہ کشمیر کی صورت حال پر عالمی برادری کی توجہ کی ضرورت ہے اس تناظر میں بیس کیمپ کے کردار کو بڑھایا جانا چاہیے۔ انہوں نے جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر پر پابندی، جماعت اسلامی کے رہنماؤں کی گرفتاری جماعت کے اداروں کو بند کرنے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یہ اقدام انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی ہے ۔آزادکشمیر قانون ساز اسمبلی کے اسپیکر شاہ غلام قادر نے کہا کہ کنٹرول لائن کے متاثرین کی امداد کے لیے جامع منصوبہ بنایا جارہا ہے آزادکشمیر حکومت نے بھی فنڈز مختص کر رکھے ہیں جبکہ وفاقی حکومت بھی 5ارب دے گی ۔ پاکستان پیپلز پارٹی آزادکشمیر کے صدر لطیف اکبر نے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا کہ تنازع کشمیر کے سلسلے میں حالیہ صورت حال کے تناظر میں تمام سیاسی جماعتوں کی کل جماعتی کانفرنس بلائی جائے اور کانفرنس کی سفارشات کی روشنی میں کشمیر کے سلسلے میں کام کیا جائے ۔جماعت اسلامی آزادکشمیر کے سابق امیر عبدالرشید ترابی نے زور دیا کہ ریاستی عوام اتحاد ویکجہتی سے بھارتی منصوبوں کو ناکام بنائیں انہوں نے جماعت اسلامی پر پابندی کی مذمت کی جماعت اسلامی آزادکشمیر کے سابق امیر سردار اعجاز افضل خان نے تجویز دی کہ صدر آزادکشمیر فوری طور پر مشیر رائے شماری کا تقرر کریں۔کل جماعتی مشاورتی کانفرنس سے آزادکشمیر کے سابق صدر جنرل محمد انور خان ،مسلم کانفرنس کے رہنما رکن قانون ساز اسمبلی سردار صغیر خان،پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما سابق وزیر مطلوب انقلابی ،جموں وکشمیر پیپلز پارٹی کے صدر راجا فضل کریم ،کل جماعتی حریت کانفرنس کے رہنما غلام محمد صفی،سید عبداللہ گیلانی،محمود احمد ساغر،رفیق ڈار،غلام نبی نوشہری ،اعجاز رحمانی،جمعیت علما جموں وکشمیر کے صدر امتیازصدیقی،جمعیت علما کے امتیاز عباسی،جمعیت اہلحدیث کے شہاب الدین مدنی ،نائب امیر جماعت اسلامی و گلگت بلتستان کے امیر مشتاق ایڈووکیٹ ،راجا جہانگیر خان،نورالباری سمیت دیگر قائدین نے خطاب کیا ۔کانفرنس کے اختتام پر مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا۔