جمال خاشق جی کاغذات بنوانے کے سلسلے میں عمارت کے اندر گئے تھے‘ باہر کھڑی منگیتر انتظار کرتی رہ گئی

143
استنبول: جمال خاشق جی کی منگیتر سعودی قونصل خانے کے باہر کھڑی ہے‘ چھوٹی تصویر لاپتا صحافی کی ہے
استنبول: جمال خاشق جی کی منگیتر سعودی قونصل خانے کے باہر کھڑی ہے‘ چھوٹی تصویر لاپتا صحافی کی ہے

استنبول (انٹرنیشنل ڈیسک) سعودی حکومت پر تنقید کرنے والے سعودی صحافی جمال خاشق جی کی اپنے قونصل خانے سے لاپتا ہونے کا معاملہ تنازع کی صورت اختیار کرگیا۔ ترک حکومت کا کہنا ہے کہ صحافی ابھی تک قونصل خانے کی عمارت کے اندر ہی موجود ہے۔ جب کہ استنبول میں سعوی قونصل خانے کا اصرار ہے کہ واشنگٹن پوسٹ کے کالم نگار عمارت سے رخصت ہونے کے بعد لاپتا ہوئے۔ سعودی قونصل خانے کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا کہ وہ ترک حکام کے ساتھ اس معاملے پر مکمل تعاون جاری رکھے ہوئے ہے۔ جمال خاشق جی منگل کی دوپہر استنبول میں سعودی قونصل خانے میں داخل ہوئے تھے۔ واشنگٹن پوسٹ کا کہنا ہے کہ وہ سعودی قونصل خانے میں معمول کی کاغذی کارروائی مکمل کرنے گئے تھے اور اس کے بعد سے انہیں نہیں دیکھا گیا۔ اخبار کا مزید کہنا ہے کہ ہمیں نہیں معلوم کہ آیا انہیں حراست میں لیا جا رہا ہے، سوالات پوچھے جا رہے ہیں یا انہیں کب رہا کیا جائے گا؟ جمال کی منگیتر کا کہنا ہے کہ وہ استنبول میں سعودی قونصل خانے میں داخل ہوئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ ہم دستاویزات کے سلسلے میں سعودی سفارت خانے گئے، تاہم مجھے جمال کے ساتھ اندر جانے کی اجازت نہیں دی گئی اور ان کا موبائل بھی باہر ہی رکھوا لیا گیا۔ خاتون نے سعودی حکام کے دعوے کو مسترد کرتے ہوئے مزید کہا کہ جمال کو کسی نے باہر آتے ہوئے نہیں دیکھا۔ واضح رہے کہ جمال خاشق جی سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی پالیسیوں کے ناقد ہیں۔ سفارتی حلقوں کے مطابق صحافی کے لاپتا ہونے کے معاملے پر ترکی اور سعودی عرب کے تعلقات مزید خراب ہو سکتے ہیں۔
لاپتا صحافی

Print Friendly, PDF & Email
حصہ