کوٹری ، پاکیس سرپرستی میں منشیات ، فحاشی اور جوئے کا کاروبار عروج پر

64

کوٹری (نمائندہ جسارت) رکن قومی اسمبلی کے بھائی کی خلاف ضابطہ تعیناتی نے رنگ دکھانا شروع کردیا، سی آئی اے پولیس جامشورو جرائم پیشہ افراد کی سرکوبی کے بجائے منتھلی بڑھانے کے لیے مین پوری گٹکا کیخلاف سرگرم۔ ضلع بھر میں ہیروئن، چرس، افیون، کچی شراب سمیت فحاشی اور جوئے کا کاروبار عروج پر پہنچ گیا،جرائم پیشہ افراد سے لاکھوں روپے منتھلی وصولی کا انکشاف۔ ضلع جامشورو میں سیاسی بنیادوں پر وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کے قریبی ساتھی اور رکن قومی اسمبلی جامشورو سکندر راہیپوٹو کے بھائی سرور راہپوٹو کو خلاف ضابطہ اور عدالت عظمیٰ کے احکامات کے برخلاف آبائی ضلع میں سی آئی اے انچارج جامشورو تعینات کرنے کے بعد سی آئی اے پولیس جرائم پیشہ افراد کے بجائے مین پوری و گٹکا کیخلاف سرگرم دکھائی دیتی ہے اور ضلع بھر میں جرائم پیشہ افراد سے مبینہ ساز باز کرلی گئی ہے۔ضلع بھر میں ہیروئن ،چرس ،افیون،کچی شراب سمیت فحاشی اور جوئے کے اڈے پولیس سرپرستی میں دھڑلے کے ساتھ چل رہے ہیں ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ سی آئی اے پولیس نے سرور راہیپوٹو کی تعیناتی کے بعد مسلسل مین پوری و گٹکا کیخلاف کارروائی کرکے ڈیلروں کو منتھلی بڑھانے کا عندیہ دیا ہے جبکہ افسران کو خوش کرنے کے لیے بعض افراد کو پکڑ کر چالان بھی کیا گیا ہے ۔سی آئی اے پولیس جامشورو نے رواں ایک ہفتہ کے دوران مختلف کارروائیوں میں لاکھوں روپے مالیت کی مضر صحت اشیا ضبط کرکے متعدد افراد کو چالان جبکہ اہم ڈیلروں کو مبینہ رشوت کے عوض رہا کردیا ہے۔ پولیس سرپرستی میں کوٹری سمیت ضلع بھر میں جرائم پیشہ افرادکی جانب سے گھناؤنے کاروبار کے عوض لاکھوں روپے منتھلی دینے کا بھی انکشاف ہوا ہے جبکہ سی آئی اے پولیس کامنشیات فروشوں اور جرائم پیشہ افراد کی سرکوبی کے لیے کوئی کارروائی عمل میں نہیں لانا معنی خیز سمجھا جارہا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ سی آئی اے پولیس جامشورو کا اہلکار ذوالفقار اور ہیڈ محرر اصغر پنہور سرور راہیپوٹو کے منتھلی انچارج بنے ہوئے ہیں جو کہ ضلع بھر سے وصولی کرکے افسران کو پہنچاتے ہیں اور افسران کی ہر جائز و ناجائز خواہشات کو پورا کرنے کا کام بھی سرانجام دیتے ہیں جس کی وجہ سے پولیس افسران بھی ان پر مہربان نظر آتے ہیں۔ واضح رہے کہ اصغر پنہورکا پولیس ریکارڈ بھی خراب بتایا جاتا ہے جوکہ قتل کیس میں بھی ملوث رہا ہے مگر اس کے باوجود وہ گزشتہ 20 سال سے کوٹری میں ڈیوٹی سر انجام دے رہا ہے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ