غزوۂ بدر یوم الفرقان

177

بدر کا معرکہ رمضان المبارک 2ھ کی 17تاریخ کو پیش آیا۔ لڑائی سے پہلی رات جب کہ آسمان پر سترہویں کا چاند چمک رہا تھا۔ نبی اکرم ؐ نے اللہ کے حضور گڑگڑا کر دعائیں کیں۔ آپ نماز سے فارغ ہوکر اپنے عریش میں دوزانو بیٹھ گئے اور اللہ کی موعودہ نصرت کو آواز دی۔ وہ رات بھی تاریخ کی عجیب رات تھی! اہلِ ایمان عشاء کی نماز کے بعد نوافل، تلاوت، ذکرالٰہی اور دعا ومناجات میں مشغول تھے۔ کسی کی آواز میں لحنِ داؤدی کا جادو تھا، تو کسی کی آواز ہچکی بندھ جانے سے لرزاں تھی، کوئی سربسجود تھا تو کوئی قیام میں تھا۔ ہچکیاں بھی تھیں اور سسکیاں بھی، امید بھی تھی اور ایقان بھی۔
دوسری جانب اہلِ کفر کے خیموں میں اور ہی عالم تھا۔ ضیافتیں، بھُنا ہوا گوشت، بادہ وجام، قہقہے، اشعار، مزاح، کبر وغرور، خاندانی تفاخر، بہادری کے قصے اور نہ معلوم کیا کیا خرافات۔ پیٹ بھر کر کھا چکے تو صراحیوں کے منہ کھل گئے۔ نرم ونازک تھرکتے ہوئے جسموں اور پائل کی جھنکار نے سب کو مسحور کردیا۔ رقص وموسیقی اور قریش کی بہادری پر مشتمل رزمیہ ترانے اور گانے بجانے والیوں کے ہاتھوں اور آنکھوں کی حرکات وسکنات! اور اس کلچرل شو کے درمیان بہکے ہوئے نوجوانوں کا غل غپاڑہ اور شورہنگامہ! دونوں جانب کے جنگجو ایک دوسرے سے کتنے مختلف تھے! چشم فلک یہ سب کچھ دیکھ رہی تھی اور گوشِ ارض سب کچھ سن رہا تھا۔
آسمان کی بلندیوں پر چاند مشرق سے مغرب کی جانب رواں دواں تھا۔ صحرا میں چاندنی پھیلی ہوئی تھی۔ منظر بے حد دلربا تھا۔ چاند سرپر آیا۔ رات کا آدھا حصہ بیت چکا تھا۔ اب ہر جانب ہو کا عالم تھا۔ جنوب میں قریش کے خیموں میں تھرکتے ہوئے جسم تھک ہار کر بے حس پڑے تھے۔ جام کو گردش دینے والے بے سدھ خراٹے لے رہے تھے۔ قالینوں پر جگہ جگہ بادہ ساغر اوندھے پڑے تھے۔ اونٹ کا بھنا ہوا گوشت اور انگور کی نفیس شراب، اپنی طاقت کا زعم وپندار اور قریش کی عظمت ونخوت کا نشہ! ان سب چیزوں نے اہلِ خیمہ کو مدہوش کررکھا تھا۔ دوسری جانب ذرا فاصلے پر شمال میں فاقہ مستوں کے خیموں میں بھی خوش الحان قرّا? اور شب زندہ دار عابدین تھک ہار کر سوگئے تھے۔ دعائیں مانگی گئیں، آنسو بہائے گئے اور اللہ کی رحمت ونصرت کی امید پر پہلو فرش خاک پر ٹکا دیے گئے۔ اب ہوکا عالم تھا۔ نہ کسی پرندے کے پر مارنے کی آواز، نہ درندے کے دہاڑنے کی صدا، نہ کوئی چرندہ اس سکوت کو توڑنے کے لیے متحرک تھا۔
عریش کے دروازے پر جاں نثار رسول افضل البشر بعد الانبیاء صدیق اکبر کھڑے ہیں۔ عریش کے اندر آفتابِ رسالت جلوہ فرما ہیں۔ اس سکوت میں بس ایک ہی آواز ہے جو سنائی دے رہی ہے۔ یہ اس کائنات کے سب سے بڑے اور سب سے سچے انسان محمد رسول اللہ ؐ کی صدائے التجا ہے۔ عریش کے مدخل سے آسمانی چاندکی کرنیں اندر داخل ہورہی ہیں اور زمینی چاند، ماہتابِ نبوت کا منور چہرہ صاف نظر آرہا ہے۔ آنسوؤں کی لڑیاں موتیوں کی صورت ریش مبارک میں جذب ہورہی ہیں۔ کندھے سے چادر بار بار گرپڑتی ہے۔ ہچکی بندھ گئی ہے۔ ایسے میں سب سوجائیں تو سوجائیں، مگر ابوبکر کو نیند کیسے آسکتی ہے؟ وہ رات بھر سے کھڑے ہیں۔ چادر بار بار اٹھا کر شانۂ مبارک رکھتے ہیں۔
نبی کریم ؐ کی کیفیت کو دیکھ کر ابوبکر کا کلیجہ منہ کو آنے لگا اور عرض کیا حسبک یانبی اللہ۔ عین اس لمحے سرور دوعالم نے سرمبارک اٹھایا اور فرمایا: ابشریاابا بکر، اے بکر خوش خبری سن لو۔ جبریل آئے کھڑے تھے۔ فرشتوں کی جماعت صف بستہ حاضر تھی۔ وعدہ بانی پورا ہوگیا تھا۔ دعائیں مستجاب ہوچکی تھیں۔
نبی اکرم ؐ کی دعاؤں کا تفصیلی ذکر حدیث کی کتابوں میں ملتا ہے۔ جب آپ دعا کررہے تھے تو آنکھوں سے آنسو مسلسل بہے جارہے تھے۔ چادر کندھے سے باربار نیچے گرجاتی تھی۔ آپ نے اللہ تعالیٰ سے یوں دعا مانگی: ’’اے اللہ! یہ قریش کے لوگ ہیں اپنے تکبر اور غرور ساتھ آئے ہیں تاکہ تیرے رسول کو جھوٹا ثابت کریں۔ خداوند! جس مدد کا تو نے مجھ سے وعدہ کیا تھا اب وہ آجائے۔ اے اللہ اگر یہ مٹھی بھر جماعت ہلاک ہوگئی تو روئے زمین پر کہیں تیری عبادت نہ ہوگی۔ اے اللہ! کل ان کفار کا کام تمام کردے۔‘‘
ایک روایت میں ہے کہ آپؐ نے اللہ تعالیٰ سے یہ دعا بھی مانگی: ’’اے اللہ اس امت کا فرعون ابوجہل بچ کر نہ جائے۔‘‘ کچھ دوسرے سرداروں کے نام بھی ملتے ہیں جن کے قتل کی آپ ؐ نے دعا مانگی تھی۔ ان میں سے ایک بھی نہ بچ کر نکلا۔
نبی اکرمؐ کی دعاؤں کے مجموعے حدیث کی مستند کتابوں میں مدون کیے گئے ہیں۔ نبی کریمؐ کی جملہ دعائیں نہایت جامع، پرتاثیر اور اللہ کی رحمت کو جوش دلانے والی ہیں، مگر غزوۂ بدر کی دعا کا رنگ ہی دوسرا ہے۔ اس موقع پر عجز وانکسار اور لجاجت والحاح کا جو نمونہ نظر آتا ہے، وہ بھی اپنی مثال آپ ہے، مگر اس کے ساتھ ایک عجیب قسم کا احساس ہوتا ہے کہ آپؐ کو اپنے اللہ پر کس قدر مان ہے اور کیوں نہ ہو اپنا سب کچھ اس کے سامنے ڈھیر کردیا تھا، اسی کی رضا مطلوب تھی، اسی کے کلمے کو سربلند کرنا پیش نظر ٹھا۔ اس کے دین کو تمام ادیان پر غلبہ عطا کرنا منزلِ مقصود ٹھیرا تھا۔
’’ھذہ العصابہ‘‘ (یہ مٹھی بھر جماعت) کے الفاظ خاص طور پر قابل غور ہیں۔ قریش کی نخوت وطاقت کا تذکرہ بھی دعا میں ملتا ہے اور اپنے ساتھیوں کی بے چارگی وبے سروسامانی کے اشارات بھی ملتے ہیں۔ نبی اکرمؐ کا کل سرمایہ وہی تھا جو آپ نے میدان میں لاکر پیش کردیا تھا۔ یہ 313نفوس کی پونجی تھی۔ آپ نے اپنے دامن میں جو ہیرے اور موتی جمع کیے تھے وہ یہی تھے۔ یہ تو جذبۂ شہادت سے سرشار تھے، جان قربان کردیتے، مگر ان کی شکست کا مطلب یہ تھا کہ اللہ کی عبادت کرنے والا زمین پر کوئی نہ رہتا۔
سوچیے دعا تو مدینہ منورہ میں بھی کی جاسکتی تھی۔ مسجد نبوی بدر کے میدان سے کہیں زیادہ بابرکت اور اللہ کو پسند ہے۔ یہ دعا عین میدان بدر میں کی گئی۔ رحمان کے بندے اور شیطان کے ساتھی ایک دوسرے کے مدمقابل آگے تھے، موت آنکھوں کے سامنے تھی، یہاں دعا کا فلسفہ بھی سمجھ میں آگیا کہ پہلے اپنا سب کچھ نذر کے لیے پیش کرو پھر دست دعا پھیلاؤ۔ اس شان سے جب دعا مانگی گئی تو درِ قبولیت کھلا اور بظاہر ناممکن ممکن بن گیا۔
جنگ کے دن نبی اکرمؐ نے صحابہ سے خطاب فرمایا۔ نہایت پر اثر اور جامع‘ مختصر اور دلنشین‘ جنت کی وسعتوں کا تذکرہ اور اس کی غیر فانی نعمتوں کا بیان۔ صف بندی بھی کی اور جنگ کے دوران حکمت عملی اختیار کرنے کے لیے ہدایات بھی دیں۔ صف بندی کا طریقہ پہلی مرتبہ نبی پاکؐ ہی نے دنیا کی حربی تاریخ میں متعارف کرایا۔ اس کے بعد سے آج تک یہ مختلف انداز کے ساتھ جنگی حکمت عملی میں جنگوں میں رائج چلا آرہا ہے۔
آپ نے جنگی حکمت عملی کے لیے جو ہدایات دی تھیں ان میں اہم باتیں یہ تھیں۔ نظم و ضبط اور جرات کا مظاہرہ کیا جائے۔ جنت کا حصول اور رضائے الٰہی مقصود ہو۔ تیر اس وقت چلایا جائے جب دشمن اس کی مار میں ہو۔ کوئی ایک تیر بھی اس طرح نہ چلایا جائے کہ وہ ضائع ہو جائے۔ دشمن کے قریب آنے پر پہلے نیزے کا استعمال کرنا اور پھر جب دشمن بالکل روبرو آجائے تو تلوار سے کام لینا اور جان رکھنا کہ جو بندہ گھمسان میں صبر و ہمت اور ثابت قدمی و استقامت دکھاتا ہے‘ اللہ تعالیٰ اس کے لیے آسانی پیدا کر دیتا ہے اور غم سے نجات عطا فرماتا ہے۔
اسلحے اور تعداد کی کمی کے پیش نظر نبی اکرمؐ کی یہ ہدایات نہایت مفید‘ جامع اور بہترین حکمت عملی کا حسین مرقع ہیں۔ یہ بات پیش نظر رہنی چاہیے کہ نبی اکرمؐ نے اپنے عریش کو بطور آپریشن روم یا کمان پوسٹ کے استعمال کیا‘ مگر مستشرقین کا یہ خیال کہ آپ عملاً میدان جنگ سے مجتنب رہے‘ درست نہیں ہے۔ آپؐ دشمن سے لڑائی کے وقت میدان جنگ میں موجود تھے۔ علامہ ابن کثیر رحمۃ اللہ علیہ نے اپنی معروف تاریخ ’’البدایہ و النہایہ‘‘ میں سیدنا علی بن ابی طالب کا یہ قول نقل کیا ہے: ’’یوم بدر میں ہم نے دیکھا کہ سخت لڑائی کے وقت نبی اکرمؐ ہم میں سے سب سے آگے تھے اور دشمن پر حملہ کر رہے تھے۔ ہم جب بھی اپنے آپ کو مشکل میں پاتے آپؐ کے سایے میں پناہ لیتے تھے۔‘‘ (بحوالہ: البدایہ و النہایہ، الجز الاول)