اسکول مالکان تعلیم کو فروخت نہ کریں، فوزیہ صدیقی

37

کراچی (اسٹاف رپورٹر) قوم کی بیٹی ڈاکٹر عافیہ صدیقی کی ہمشیرہ اور عافیہ موومنٹ کی رہنما ڈاکٹر فوزیہ صدیقی نے کہا ہے کہ ’’ایجوکیشن سٹی‘‘ قوم کی تعلیمی فلاح کا منصوبہ عافیہ کی وطن واپسی کا منتظر ہے۔ عافیہ نے پاکستان میں امریکا اور یورپ کے معیار کے تعلیمی منصوبے پر کام شروع کر دیا تھا، مگر تین بچوں سمیت اغوا کی وجہ سے وہ ’’ایجوکیشن سٹی‘‘ کا منصوبہ جاری نہ رکھ سکی۔ اگر یہ 16 برس ضائع نہ کیے جاتے تو آج ہماری ایک نسل ’’ایجوکیشن سٹی‘‘ کے ثمرات سے مستفید ہو کر عملی میدان میں قوم کی خدمت کر رہی ہوتی۔ یہ بات دی میرٹ اسکول، لانڈھی کی سالانہ تقریب انعامات کی مہمان خصوصی ڈاکٹر فوزیہ صدیقی نے اساتذہ، والدین اور طلبہ و طالبات سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اس موقع پر ان کے ساتھ ڈاکٹر عافیہ کے صاحبزادے احمد بھی موجود تھے۔ ڈاکٹر فوزیہ صدیقی نے کہا کہ عافیہ نے پی ایچ ڈی کی ڈگری بچوں کی تعلیم کے شعبے میں ہی حاصل کی تھی۔ وہ بچوں میں پوشیدہ صلاحیتوں کو نکھار کر سامنے لانے کے منصوبے پر کام کر رہی تھی۔ وہ ایک ایسے تعلیمی منصوبے پر کام کر رہی تھیں،، جو ملک سے ’’رٹا تعلیم‘‘ کے خاتمے کا سبب بن جاتا۔ انہوں نے مزید کہا کہ معیاری تعلیم پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے، کیونکہ اگر ایک بچے یا بچی کی تعلیمی بنیاد مضبوط نہ ہو تو اس کے اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے مواقع ختم ہوجاتے ہیں۔