آسیہ مسیح کی رہائی کیخلاف مختلف شہروں میں احتجاج ،سیکڑوں گرفتار ،مقدمات درج 

77
ملعونہ آسیہ مسیح کی رہائی کیخلاف ملک کے مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے کیے جارہے ہیں جبکہ کراچی میں مشتعل افراد کے ہاتھوں تباہ ہونیوالی پولیس موبائل
ملعونہ آسیہ مسیح کی رہائی کیخلاف ملک کے مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے کیے جارہے ہیں جبکہ کراچی میں مشتعل افراد کے ہاتھوں تباہ ہونیوالی پولیس موبائل

کراچی/لاہور/اسلام آباد/پشاور(اسٹاف رپورٹر+خبرایجنسیاں) آسیہ مسیح کی رہائی کیخلاف کراچی سمیت ملک کے مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے کیے گئے۔پولیس نے کریک ڈاؤن کرتے ہوئے سیکڑوں افراد کو گرفتار کرکے مقدمات درج کرلیے۔ کراچی میں جماعت اسلامی نے نماز جمعہ کے بعد مساجد کے باہر احتجاجی مظاہرے کیے اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ توہین رسالت کی مرتکب ملعونہ کو شریعت کے مطابق سزادی جائے اور اس کے ملک چھوڑنے پر پابندی لگائی جائے۔ بہادر آباد میں تحریک لبیک کی ریلی کو منتشر کرنے کے لیے پولیس نے شیلنگ کی، مظاہرین نے جوابی پتھراؤ کیا اور پولیس کی موبائل تباہ کردی۔ مظاہرین پولیس اور رینجرز کا حسار توڑ کر پریس کلب کی جانب روانہ ہوگئے، اس دوران پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ہنگامہ آرائی کے الزام میں 50 سے زائد افراد کو حراست میں لے لیا۔ ٹنڈوآدم میں رینجرزوپولیس نے احتجاجی مظاہرے کو پریس کلب جانے روک دیا جس کے بعد جناح روڈ پر بہت بڑا احتجاجی مظاہرہ ہواجس سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ توہین رسالت کسی صورت میں برداشت نہیں کی جاسکتی ، عدالت عظمی ٰکے فیصلے پر دل شکنی ہوئی، انصاف کا قتل ترازوں کے نیچے کیا گیا ۔ٹنڈوآدم میں آل پارٹیز مجلس عمل تحفظ ختم نبوت کی جانب سے جمعہ کو بھرپور ہڑتال کی گئی ،بعدنماز جمعہ بڑے احتجاجی مظاہرے ہوئے جس کی قیادت علامہ احمد میاں حمادی ، علامہ محمد راشد مدنی ،مفتی محمد طاہر مکی اور حافظ محمد زاہد حجازی نے کی ۔رہنماؤ ں نے عوام سے کہا کہ عمران حکومت کی قادیانیت ویہودیت نوازی تو آگے کھلے گی جس پر ہماری آنکھیں کھلی رہ جائیں گی،علماء نے عوام سے تیار رہنے کی اپیل کی ۔ احتجاجی مظاہرے میں مطالبہ کیا گیا کہ ملعونہ آسیہ مسیح کیس کو دوبارہ سنا جائے اور اس میں تمام شیعہ ،سنی ، بریلوی، دیوبندی، اہلحدیث کی نمائندگی دی جائے اس کے بعد جو فیصلہ آئے گا قبول کیا جاسکتا ہے۔ادھر لاہور میں تحریک لبیک کے 100 سے زائد کارکنوں کو گرفتار کرکے خلاف دہشت گردی کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کر لیا گیا۔