علامہ اقبالؒ کے پیغام پر حل کر طلبہ ملک میں تبدیلی لاسکتے ہیں۔ الخدمت فاؤنڈیشن

30

حیدر آباد (نمائندہ جسارت) الخدمت فاؤنڈیشن سندھ کے شعبہ کفالت یتامیٰ کے زیر اہتمام 9 نومبر ’’اقبال ڈے‘‘ کے موقع پر کلام اقبال، تقریر، مضمون نویسی اور کوئز مقابلوں کا انعقاد کیا گیا، علامہ اقبالؒ کی بچوں کے لیے دعا ’’ لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری‘‘، ’’زندگی شمع کی صورت ہو خدایا میری‘‘، ’’دور دنیا کا مرے دم سے اندھیرا ہو جائے‘‘، ’’ہر جگہ میرے چمکنے سے اجالا ہو جائے‘‘کو بچوں نے خصوصی طورپر اجاگر کیا۔تقریبات کا اہتمام ضلع حیدر آباد، بدین، ٹنڈو الہیار، ٹنڈو محمد خان، ڈہرکی ، ڈگری و دیگر اضلا ع میں کیا گیا۔ تقریب کے اختتام پر مقابلے میں شریک بچوں میں سرٹیفکیٹ، کیش انعامات، ٹرافی اور مختلف تحائف تقسیم کیے گئے۔ اس موقع پر اسکول اساتذہ ، علمی شخصیات اور الخدمت کے مقامی ذمے داران نے بچوں کو علامہ اقبال کے حوالے سے خاص خاص باتیں بتائیں،مقررین نے کہا کہ شاعر مشرق علامہ محمد اقبال کے پیغام پر چل کرطلبہ ملک میں حقیقی تبدیلی لا سکتے ہیں، ذلت کی گہرائیوں سے بچانے کے لیے اقبال نے مسلم نوجوانوں کو تعلیم سے ناطہ جوڑنے پر زور دیا۔علامہ اقبال کا تصور اور فکر ہی پاکستان کی بنیاد ہے کیونکہ علامہ نے مسلمانوں میں اتحاد و اتفاق پر زور دیا اور اپنی شاعری اور فکر و فلسفہ سے مسلمانوں کو جگایا اور اپنے اشعار و افکار کے ذریعے نوجوانوں میں امنگ اور بلندی کا سبق دیا ہے۔جنوبی ایشیا کے فارسی، اردو اور ہندی بولنے والے لوگ محمد اقبال کو شاعر مشرق کے طور پر جانتے ہیں۔ آپ کی شاعری زندہ شاعری ہے جو ہمیشہ برصغیر ہی نہیں عالم اسلام کے مسلمانوں کے لیے مشعل راہ بنی رہے گی۔ اقبال نے نئی نسل میں انقلابی روح پھونکی اور اسلامی عظمت کو اجاگر کیا۔ ان کے کئی کتب کے انگریزی، جرمنی، فرانسیسی، چینی، جاپانی اور دوسری زبانوں میں ترجمے ہو چکے ہیں۔ جس سے بیرون ملک بھی لوگ آپ کے معترف ہیں۔ بلامبالغہ علامہ اقبال ایک عظیم مفکر مانے جاتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.