چینی وزیر خارجہ کا دورہ پاکستان ،دفاعی تعاون بڑھانے کا اعلان 

134
اسلام آباد: چین کے وزیرخارجہ وانگ زی پاکستانی ہم منصب سے ملاقات کررہے ہیں
اسلام آباد: چین کے وزیرخارجہ وانگ زی پاکستانی ہم منصب سے ملاقات کررہے ہیں

اسلام آباد (نمائندہ جسارت/مانیٹرنگ ڈیسک) چین کے وزیر خارجہ وانگ ژی نے اپنے دورے کے دوران آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، اپنے پاکستانی ہم منصب شاہ محمود قریشی سے وفد کے ساتھ ملاقات کی ، ملاقات میں چینی وزیر خارجہ نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاک فوج کے کردار اور پاکستان کی قربانیوں کوسراہا،انہوں نے واضح کیا کہ دنیا کو خطے میں امن کے لیے پاکستان کی کاوشوں کا اعتراف کرنا چاہیے،پاکستان کی معاشی اور دفاعی سمیت ہر شعبے میں تعاون جاری رکھیں گے اور پاکستان کو درپیش مسائل بھی مل کر حل کرلیں گے ۔آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری بیان کے مطابق چین کے وزیر خارجہ وانگ ژی نے وفد کے ساتھ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ملاقات کی۔وفود کی سطح پر ہونے والی ملاقات میں خطے کی سلامتی کی صورتحال اور باہمی تعاون کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔چین کے وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاک چین تعلقات باہمی احترام پر مبنی ہیں۔پاک فوج کی پیشہ ورانہ صلاحیتوں کو سراہتے ہوئے چین کے وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ دنیا کو خطے میں امن کے لیے پاکستان کی کاوشوں کا اعتراف کرنا چاہیے۔چین کے وزیر خارجہ نے سی پیک منصوبے کو فراہم کی جانے والی سیکورٹی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ چین مکمل خوشحالی پر یقین رکھتا ہے۔آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے چینی وزیر خارجہ کے دورے اور پاکستان کی مسلسل حمایت پر اپنے دوست ملک کا شکریہ ادا کیا۔جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ پاکستان کو بین الاقوامی چیلنجز کا سامنا ہے لیکن ہم امن اور استحکام کے ذریعے اقوام عالم میں اپنا جائز مقام حاصل کرنے کے لیے پُرعزم ہیں۔چینی وزیر خارجہ وانگ ژی نے دفتر خارجہ کا دورہ بھی کیا، جہاں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے ان کا استقبال کیا۔اس موقع پر دونوں وزرا خارجہ کے درمیان ون آن ون ملاقات ہوئی۔ملاقات کے بعد پاکستان اور چین کے درمیان وفود کی سطح پر مذاکرات کا آغاز ہوا۔پاکستانی وفد کی قیادت وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی جبکہ چینی وفد کی قیادت وزیر خارجہ وانگ ژی نے کی۔ترجمان دفتر خارجہ کی جانب سے جاری کیے گئے بیان کے مطابق مذاکرات میں چین نے پاکستان کی معیشت کے استحکام کے لیے حمایت کا اظہار کیا۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ پاک۔چین اقتصادی راہداری منصوبہ نئی حکومت کی اولین ترجیح ہے۔مذاکرات میں پاک۔چین اقتصادی راہداری (سی پیک) منصوبے، ثقافتی تعاون اور خطے کی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ سی پیک حکومت کی اولین ترجیح اور پاکستان کی سماجی اور معاشی ترقی کے لیے اہم ہے۔چینی وزیر خارجہ کی جانب سے وزیراعظم عمران خان کو دورہ چین کی دعوت بھی دی گئی۔دوطرفہ مذاکرات کے بعد چینی ہم منصب کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ چین کے ساتھ تعلقات خارجہ پالیسی میں انتہائی اہم ہیں، چینی وزیرخارجہ سے ملاقات میں کئی اہم موضوعات پربات چیت ہوئی جب کہ چینی وزیر خارجہ، صدر مملکت، وزیراعظم اور آرمی چیف سے ملاقات کریں گے۔انہوں نے کہا کہ سی پیک ہماری حکومت کی ترجیحات میں شامل ہے، مذاکرات میں دو طرفہ تعلقات اور عالمی امور پر بات چیت ہوئی، غربت کے خاتمے اور روزگار کے مواقع پیدا کرنے پر بھی بات ہوئی، پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اہم کردار ادا کیا ہے، چین نے دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی قربانیوں کوسراہا۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ چین نے عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ پاکستان کی قربانیوں کو سراہا جائے، پاکستان اپنی سر زمین دہشت گردی کے لیے استعمال نہیں ہونے نہیں دے گا۔وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبہ تیز رفتار ترقی کا باعث بن رہا ہے، یہ منصوبہ نئی حکومت کی اولین ترجیح ہے، ملک میں چینی باشندوں کی سیکورٹی کو یقینی بنایا جائے گا۔ اس موقع پر چینی وزیر خارجہ وانگ ژی نے کہا کہ پاکستان چین کا بہترین اور قابل اعتماد دوست ہے، پاکستان کو درپیش مسائل مل کر حل کر لیں گے، پاکستان کے ساتھ ہر شعبے میں بھرپور تعاون جاری رکھیں گے، پاکستان کے دورے کا مقصد نئی حکومت کے ساتھ رابطے بڑھانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چین اپنی خارجہ پالیسی میں پاکستان کو انتہائی اہمیت دیتا ہے، پاکستانی ہم منصب کے ساتھ ملاقات بہت مثبت رہی، پاکستان کے ساتھ تزویراتی تعلقات مزید مضبوط بنانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ غربت کے خاتمے اور پاکستان کی ترقی کے لیے بھرپور تعاون کریں گے، پاکستان کے ساتھ جاری تمام منصوبے مکمل کریں گے، دونوں ملکوں کے تعاون سے سرمایہ کاری میں اضافہ اور بیروزگاری میں کمی ہو گی، چینی تعاون کا مقصد پاکستان میں تعلیم، زراعت اور دیگر شعبوں کو بہتر بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا سے دہشت گردی کا خاتمہ بھی ہماری ترجیحات میں شامل ہے، معاشی ترقی اور غربت کے خاتمے کے لیے مشترکہ سیمینار منعقد کریں گے، اس سے عوامی رابطوں اور دونوں ملکوں میں مختلف شعبوں میں تعاون میں اضافہ ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان میں امن و استحکام کے لیے دونوں ملک ملکر کام کریں گے۔ چینی وزیر خارجہ نے پاکستان کے ساتھ دفاعی تعاون بڑھانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف بہت قربانیاں دی ہیں، چین دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی کوششوں کی مکمل حمایت کرتا ہے جبکہ عالمی معاملات پر بھی پاکستان کی مکمل حمایت کرتے رہیں گے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ