وفاقی کابینہ نے فاٹا اصلاحات بل کی منظوری دیدی 

141
اسلام آباد: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیرصدارت کابینہ کا اجلاس ہورہا ہے
اسلام آباد: وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیرصدارت کابینہ کا اجلاس ہورہا ہے

اسلام آباد( نمائندہ جسارت) وفاقی کابینہ نے فاٹا اصلاحات پر فوری عملدرآمد کی منظوری دے دی۔وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت اجلاس میں ملکی سلامتی اور معاشی صورت حال سمیت 27 نکاتی ترمیمی ایجنڈا پیش کیا گیا، جس میں فاٹا اصلاحات کا ایجنڈا سرفہرست تھا۔اجلاس کے دوران وفاقی کابینہ نے پاکستان سافٹ ویئر ایکسپورٹ بورڈ کے نئے ایم ڈی کے تقرر کی منظوری دینے کے ساتھ ساتھ ایچ بی ایف سی کے ایم ڈی کے تقرر کے لیے قواعد وضوابط کی منظوری بھی دی۔وفاقی کابینہ کی جانب سے اسلحہ کی کمرشل امپورٹ کی پالیسی میں ترمیم کی منظوری بھی دی گئی۔وفاقی کابینہ کے اجلاس میں نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کو وزیراعظم آفس کے ماتحت کرنے اور اسلام آباد میں میڈیکل سٹی بنانے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔اجلاس کے دوران وفاقی
کابینہ نے کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کے ماسٹر پلان میں ترمیم کی منظوری بھی دی۔قاتلانہ حملے میں زخمی ہونے والے وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال بھی صحت یابی کے بعد وفاقی کابینہ کے اجلاس میں شریک ہوئے۔ارکان کابینہ نے گرمجوشی سے احسن اقبال کا استقبال کیا اور صحت یابی پر انہیں مبارکباد دی۔احسن اقبال نے کابینہ ارکان کی جانب سے دعاؤں اور نیک خواہشات کے اظہار پر شکریہ ادا کیا۔علاوہ ازیں وفاقی کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی (ایکنک) نے مختلف مقامات پر 11 ایل پی جی ائر مکس پلانٹس لگانے اور مقامی سطح پر کھاد کی پیداوار کی حوصلہ افزائی کے لیے پاک عرب فرٹیلائزر لمیٹڈ کو 75 ملین مکعب کیوبک فٹ روزانہ گیس کی فراہمی کی منظوری دے دی ۔ اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت وزیراعظم آفس میں ہوا۔ اجلاس میں گوادر بندرگاہ اور گوادر فری زون کے ٹیکسوں سے استثنا کو یقینی بنانے کے مقصد کے لیے متعلقہ قوانین میں ضروری ترامیم وضع کرنے کے لیے تجاویز پر غور کیا گیا اور مجوزہ ترامیم میں رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے کمیٹی قائم کی گئی۔ اقتصادی رابطہ کمیٹی نے ایل این جی ٹرمینل کے قیام کے لیے پرائیویٹ ایل جی ڈویلپرز کے لیے سائٹ مختص کرنے پر بھی غور کیا۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ صرف پورٹ قاسم پر ان مقامات کو ایل این جی فلوٹنگ ٹرمینل کے قیام کے لیے مختص کیا جائے گا جو کوانٹیٹیو رسک اسسمنٹ کے بعد محفوظ قرار پائیں گی۔ اجلاس میں پاک عرب فرٹیلائزر لمیٹڈ کے لیے 35 ملین مکعب کیوبک فٹ روزانہ ماڑی شیلو گیس اور 40 ماڑی ڈیپ گیس فراہم کرنے کی تجویز کی بھی منظوری دی گئی تاکہ اس کی دستیاب استعداد کار سے استفادہ کیا جا سکے اور کھاد کی مقامی سطح پر پیداوار کی حوصلہ افزائی کی جائے جس سے یوریا کھاد کی درآمد میں کمی آئے گی۔ سوئی ناردرن گیس پائپ لائن لمیٹڈ اور سوئی سدرن گیس کمپنی لمیٹڈ کی قیمت فروخت میں فرق اور محصولات کے معاملہ کو حل کرنے کے لیے ایک کمیٹی قائم کی گئی جس میں پیٹرولیم ڈویژن، اوگرا، خزانہ، منصوبہ بندی، ترقی اور اصلاحات ڈویژن سے اراکین ہوں گے جو گیس کی اوسطاً لاگت کا برابری کی سطح پر جائزہ لے کر برابری کے تناسب سے اوسطاً قیمت فروخت کے نئے انتظام میں بدلنے کے طریقہ کار کا جائزہ لے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ