رکن سندھ اسمبلی ستار راجپر کیخلاف تحقیقات ایک ماہ میں مکمل کرنیکا حکم

17

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سندھ ہائی کورٹ نے رکن سندھ اسمبلی ستار راجپر کے خلاف ایک ماہ میں تحقیقات مکمل کرکے رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیدیا۔ منگل کو چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ جسٹس احمد علی ایم شیخ کی سربراہی میں جسٹس محمدکریم خان آغا پر مشتمل 2 رکنی بینچ نے رکن سندھ اسمبلی ستار راجپر کی جانب سے نیب کی انکوائری کے خلاف اور
ضمنات سے متعلق دائر درخواستوں کی سماعت کی۔ نیب کے تفتیشی افسر نے عدالت کو آگا کیا کہ ستار راجپر نے آمدن سے زیادہ اثاثے بنائے ہیں، انکوائری جاری ہے، نیب کے مطابق ستار راجپر کے بینک اکاؤنٹ میں 2 ملین سے زائد ٹرانزیکشن ہوئی، ڈیفنس میں ایک فلیٹ ہے، ان کے پاس 6 مہنگی گاڑیاں اور 4 سو ایکڑزرعی اراضی ہے، تمام املاک کی انکوائری کر رہے ہیں جس کے لیے وقت درکار ہے۔ جنوری 2018 تک انکوائری مکمل کرلی جائے گی۔ عدالت نے انکوائری مکمل کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت 9 جنوری تک ملتوی کردی۔