شادی لارج بچوں سے جنسی درندگی کرنے والے گروہ کا انکشاف

141

شادی لارج( رپورٹ:۔ خالد نواز) شادی لارج میں اسکول کے بچوں سے جنسی درندگی اور ان کی غیر اخلاقی وڈیو بناکر ہزاروں روپے وصول کرنے والے گروہ کا انکشاف۔ملزمان گرفتار ملزم کے خلاف جنسی درندگی کا مقدمہ درج کرنے کے بجائے پولیس نے اسے ڈیڑھ کلو چرس میں چالان کردیا۔ تفصیلات کے مطابق شادی لارج شہر میں اسکول کے بچوں سے جنسی درندگی اور وڈیو بنانے کے انکشاف کے بعد شادی لارج پولیس نے میندرو میگھواڑ جو درزی کاکام کرتا ہے اور اس کا تعلق تھرپارکر سے ہے اس نے شادی لارج کے ایک اسکول کے کم عمر طالب علم کی بلیوپرنٹ تصاویر بناکر اسے دو سال تک بلیک میل کر کے اس سے ڈیڑھ لاکھ تک روپے وصول کیے جس کا انکشاف بچے کے والدین نے کیا اور والدین کی شکایت پر شادی لارج پولیس نے ملزم میندرو درزی کو گرفتار کیا اور ملزم نے شہریوں کی موجودگی میں اپنے جرم کا اقرار کیا ،جبکہ اس نے مزید بتایا کہ اس نے متعدد بچوں کے ساتھ بدفعلی کی ہے اور ان کی غیر اخلاقی وڈیو بنائی ہے۔ کھوسکی پولیس نے مذکورہ ملزم کو بچوں سے جنسی درندگی حراساں کرنے اور ان سے بھاری رقم وصول کرنے کا مقدمہ درج کرنے کے جائے ملزم میندرو میگھواڑ کو ڈیڑھ کلو چرس کا مقدمہ بناکر جیل بھیج دیا اور اس کے دوسرے ساتھی کیول میگھواڑ کو بھی فرار کروا دیا جس کے خلاف شادی لارج کی سول سوسائٹی ،سیاسی، سماجی اور مذہبی تنظیموں نے سخت احتجاج کیا۔ شہریوں نے مطالبہ کیا کہ ملزم کے خلاف بچوں سے جنسی زیادتی کا مقدمہ درج کیا جائے اور اس گینگ کے دیگر ملزمان کو گرفتار کیا جائے۔ دوسری صورت میں شہری سخت احتجاج اور شٹر ڈائون کریں گے۔