فیڈرل یونین آف جرنلسٹس کی کونسل نے بھی میڈیا ڈیولپمنٹ اتھارٹی بل کو مسترد کردیا

204

اسلام آباد: پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس کی فیڈرل ایگزیکٹو کونسل نے میڈیا ڈیولپمنٹ اتھارٹی بل کو متفقہ طور پر مسترد کردیا ہے اور اس فیصلے  کا  اعلامیہ اجلاس کے اختتام پر جاری بھی کردیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق  لاہور میں تین روزہ اجلاس کے اختتام پر فیڈرل ایگزیکٹو کونسل نے کہاہے کہ مجوزہ پاکستان میڈیا ڈیولپمنٹ اتھارٹی آزادیِ اظہارِ رائے پر مزید پابندیاں لگانے کی مذموم کوشش ہےاور اس مجوزہ اتھارٹی بالخصوص آن لائن، سوشل میڈیا اور ڈیجیٹل فری لانس صحافت پر پابندیاں عائد کرنے کا اقدام ہے۔

اجلاس میں فیڈرل ایگزیکٹو کونسل نے مجوزہ اتھارٹی کے ون ونڈو آپریشن کو میڈیا مارشل لاء کے مترادف قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس کے بجائے موجودہ میڈیا قوانین کی اصلاح کر کے اُنہیں مزید جمہوری، میڈیا دوست اور عوامی مفاد پر مبنی بنایا جائے۔

اعلامیہ کے مطابق فیڈرل ایگزیکٹو کونسل نے صحافیوں کے خلاف بڑھتے ہوئے خطرات اور جبری گمشدگیوں پر اظہارِ تشویش کیا اور صحافیوں کے خلاف جرائم کے خاتمے، ان پر حملہ کرنے والوں کی فوری گرفتاری اور ان کے خلاف قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

اجلاس میں جرنلسٹ پروٹیکشن بل کی پارلیمنٹ سے منظوری، سندھ حکومت سے جرنلسٹ پروٹیکشن قانون کے نفاذ، بلوچستان، خیبر پختونخوا اور پنجاب حکومتوں سے صحافیوں کے تحفظ کے لیے قانون سازی کی ذمے داری نبھانے کے بھی مطالبات کیے گئے۔

واضح رہے  کونسل نے آٹھویں ویج بورڈ ایوارڈ کے مکمل نفاذ، مالی بحران کے دوران کم کی گئی تنخواہوں کی بحالی کا بھی مطالبہ کیا ہے جبکہ اجلاس نے پندرہ ہزار صحافیوں کی بے روزگاری کو حکومت کی میڈیا مخالف پالیسیوں کا براہ راست نتیجہ قرار دیا ہے۔

 اجلاس میں حکومت کی طرف سے پیمرا، پاکستان پریس کونسل اور پی ٹی اے کو صحافیوں کے خلاف استعمال کرنے پر تنقید کی گئی، صحافیوں اور اینکرز کے خلاف ایف آئی اے کے غلط استعمال کا نوٹس لیا۔

خیال رہے کونسل نے صحافیوں اور اینکرز بالخصوص خواتین کے خلاف بڑھتی ہوئی ٹرولنگ کا بھی نوٹس لیا اور سپریم کورٹ سے آزادی صحافت و اظہار رائے کے مقدمات کی شنوائی تیز کرنے کی درخواست کی ہے۔