منتظر……………اقبال

24

گراں خواب چِینی سنبھلنے لگے
ہمالہ کے چشمے اُبلنے لگے

دلِ طُورِ سینا و فاراں دو نِیم
تجلّی کا پھر منتظر ہے کلیم