سمسٹر سسٹم میں سب سے بہترین نظام اعلیٰ تعلیم ہے،ڈاکٹرافتخار احمد

86

ایبٹ آباد (اے پی پی) سمسٹر سسٹم میں سب سے بہترین نظام اعلیٰ تعلیم ہے، ہمیں بھی اس کی افادیت کو مدنظر رکھتے ہوئے اس کی پاکستان میں کامیابی کیلیے اقدامات اٹھانا ہوں گے، اس سسٹم کی کامیابی یا ناکامی کا سارا دارومدار اساتذہ کی کارکردگی پر ہے، کالجز میں بی ایس پروگرامز کو شروع کرنا انتہائی احسن اقدام ہے۔ ان خیالات کا اظہار وائس چانسلر ایبٹ آباد یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد نے سوموار کو گورنمنٹ ڈگری کالج برائے خواتین قلندر آباد میں سمسٹر سسٹم کے حوالہ سے اساتذہ کی ایک ورکشاپ سے اپنے لیکچر کے دوران کیا۔ اس لیکچر کا انعقاد گورنمنٹ ڈگری کالج برائے خواتین قلندرآباد کی جانب سے کیا گیا تھا جس میں سمسٹر سسٹم (چار سالہ بی ایس پروگرام) کی اہمیت کو اجاگر کرنا مقصود تھا۔ ان کے ہمراہ ڈائریکٹر ٹریننگ ایبٹ آباد یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر بہادر شاہ بھی تھے۔ قبل ازیں کالج پہنچنے پر پرنسپل گورنمنٹ ڈگری کالج برائے خواتین نے مہمانوں کا استقبال کیا اور کالج کی سالانہ کارکردگی کے حوالہ سے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر افتخاراحمد کو بریفنگ بھی دی۔ وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد نے کہا کہ آج کا دورہ نالج بیڈ اکنامی کا دورہ ہے، نالج بیسڈ اکنامی نے اعلیٰ تعلیمی اداروں کی اہمیت کو اور بھی بڑھا دیا ہے، دنیا اب گلوبل ویلج کی شکل اختیار کر چکی ہے، اب بطور استاد بے شمار چیلنجز درپیش ہیں، ہمیں آج اپنے طلبہ کو ملکی نہیں بلکہ عالمی سطح پر مقابلہ کیلیے تیار کرنا ہے۔ پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد نے کہا کہ طالب علم کو اب عالمی سطح پر مقابلہ کی دوڑ کا سامنا ہے، سرکاری اداروں میں نوکری ہو یا کسی بھی بڑی کاروباری فرم میں روزگار کے مواقع دنیا بھر سے لوگ روزگار کے حصول کیلیے رجوع کرتے ہیں اور کامیابی رنگ و نسل یا شہریت کی بنیاد پر نہیں بلکہ اسے موقع دیا جاتا ہے جس کے بعد علم ہوتا ہے، ہمیں بھی اسی صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنے طلبہ کی تیاری کروانی ہے۔ اس موقع پر اساتذہ کی طرف سے سمسٹر سسٹم کے حوالہ سے کیے گئے سوالات کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر افتخار احمد نے جواب بھی دیے۔ بعد ازاں وائس چانسلر ایبٹ آباد یونیورسٹی نے کالج کے مختلف حصوں کا دورہ کیا۔