وزیراعظم کی گھوٹکی آمد‘ علی محمدمہر کے اہل خانہ سے تعزیت

63

گھوٹکی (رپورٹ:محمد کلیم صادق بھٹی)وزیر اعظم عمران خان کی کابینہ اراکین کے ساتھ گھوٹکی آمد‘ وفاقی وزیر علی محمد مہر کے انتقال پر اہل خانہ سے تعزیت، صوبائی اور قومی اسمبلی کے ضمنی الیکشن کے امیدواروں سے ملاقاتیں،سیکورٹی کے سخت انتظامات۔ تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان سابق وفاقی وزیر علی محمد مہر مرحوم کے اہل خانہ سے تعزیت کیلیے ضلع گھوٹکی کی تحصیل خان گڑھ پہنچے، انہوں نےمرحوم علی محمد مہر کے انتقال پرانکے اہل خانہ سے تعزیت کی۔بعد ازاں انہوں نے جی ڈی اے کے رکن سندھ اسمبلی علی گوہر مہر، مرحوم علی محمد مہر کے فرزنداور جولائی میں ہونے والے ضمنی انتخابات کے امیدوار احمد علی مہر اور راجا خان مہر سے بند کمرے میں آدھے گھنٹے ملاقات بھی کی جس میں متعدد امور زیر غور آئے۔ان کے ہمراہ دورے پرگورنر سندہ عمران اسماعیل، وفاقی وزیر محمد میاں سومرو، فہمیدہ مرزا، جہانگیر ترین، علیم خان اور دیگر بھی تھے ۔وزیر اعظم عمران خان نے علی محمد مہرکے لواحقین بھائیوں جی ڈی اے کے رکن سندہ اسمبلی علی گوہر مہر، پیپلزپارٹی کے ایم پی اے علی نواز عرف راجا مہر، علی محمد مہر کے فرزند احمد علی مہر اور بنگل خان مہر سے تعزیت کا اظہار کیا۔ بعد ازاں وزیر اعظم عمران خان اور جہانگیر ترین نے بند کمرے میں علی گوہر مہر، علی نواز مہر، احمد علی مہر،. حاجی خان مہر سے آدھے گھنٹے تک ملاقات کی۔ ذرائع کے مطابق ملاقات میں این اے 205 گھوٹکی کی ضمنی الیکشن کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا۔ ذرائع کے مطابق عمران خان نے مہر بھائیوں کو اپنی حکومت کی طرف سے مکمل تعاون کا یقین دلاتے ہوئے انہیں ساتھ چلنے کی یقین دہانی کرادی۔ ذرائع کے مطابق ملاقات میں نیب کی جانب سے سندھ کی سیاسی شخصیات کی پکڑ دھکڑ کے بعد پیدا ہونے والی سیاسی صورتحال کا بھی جائزہ لیا گیا۔ وزیراعظم نے مرحوم علی محمد مہر کی وزارت کے دوران حلقہ کے لیے 37 ترقیاتی اسکیموں کی تکمیل کے لیے بجٹ دینے کے معاملہ پر بھی بات چیت کی گئی۔بعد ازاں وزیر اعظم عمران خان اور وفاقی وزرا نے علی گوھر مہر کے ظہرانے میں شرکت کی بعد ازاںوہ لاہور روانہ ہوگئے۔ وزیراعظم کی آمد پر گوھر پیلس کے اطراف میں سیکورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔دوسری جانب پیپلز پارٹی کے سابق صوبائی وزیر اور ضمنی الیکشن میں امیدوار عبدالباری پتافی نے وزیر اعظم عمران اور وزرا کی گھوٹکی آمد پر ریٹرننگ آفیسر کو خط ارسال کرکے ضمنی الیکشن کے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی قرار دیا ہے ۔سابق صوبائی وزیر عبدالباری پتافی نے لیٹر کی کاپی چیف الیکشن کمشنر اور صوبائی الیکشن کمشنر کو ارسال کرتے ہوئے موقف اختیار کیا ہے کہ ضمنی الیکشن کا شیڈول جاری ہونے کے بعد حکومتی شخصیات حلقہ کا دورہ نہیں کر سکتیں جبکہ وزیر اعظم اور وزرا کا دورہ ضمنی الیکشن کے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہے این اے 205 کے امیدوار احمد علی مہر کے چچا جی ڈی اے کے رکن سندھاسمبلی علی گوھر مہر نے وزیر اعظم سے میٹنگ کی جو کہ ضمنی الیکشن پر اثر اندازہونے کی کوشش ہے ۔