قائمہ کمیٹی‘چیئرمین پی اے آر سی کے بیرونی دوروں پر تحفظات کا اظہار

22

اسلام آباد( آن لائن ) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے نیشنل فوڈ سیکورٹی نے چیئرمین پی اے آر سی کے بیرون ملک دوروں پرشدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ چیئرمین صاحب بتائیں کہ کتنے دورے کیے ؟ اور آپ کے دوروں سے ملک کا کتنا فائدہ ہوا؟۔ کمیٹی نے زیتون پروجیکٹ میں ہونے والی کرپشن کے کیسز جو نیب اور ایف آئی اے میں چل رہے ہیں اس حوالے سے تفصیلات طلب کرلی ہیں۔ کمیٹی کا اجلاس چیئرمین سید مظفر حسین شاہ کی سربراہی میں پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہوا جس میں اکثریتی اراکین نے شرکت کی ۔ چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ چیئرمین پی اے آر سی آذربائیجان، ازبکستان، تیونس، تھائی لینڈ کے دورے کرتے رہتے ہیں، ان کے دوروں سے پاکستان کو کیا فائدہ پہنچا ہے اس حوالے سے چیئرمین ہمیں بتائیں؟۔ زیتون کی کاشت میں جو بے ضابطگیاں ہوئی ہیں اور اس پر جو انکوائری چل رہی ہے اس حوالے سے بھی کمیٹی کو بتایا جائے۔ چیئرمین پی اے آر سی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وفاقی حکومت کی طرف سے اربوں روپے پی اے آر سی کو مل رہے ہیں تو اس ادارے کا کچھ نہ کچھ کردار ہونا چاہیے۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ خریف سیزن میں بلوچستان کو سب سے کم پانی ملا جبکہ سندھ کو 15 فیصد، پنجاب کو20 فیصد، خیبر پختونخوا کو34 فیصد اور بلوچستان کو 41 فیصد پانی کی قلت کا سامنا کرنا پڑا، کپاس کی کاشت میں3.50 ملین بیلز تک شارٹ فال کا سامنا ہے، فصلوں کو34 فیصد تک پانی کی قلت کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ کمیٹی نے ہدایت کی ہے کہ زمینداروں کو فصلوں کے بیچ اور اقسام کے حوالے سے آگاہی فراہم کرنے کے لیے ہر فصل سے پہلے پمفلٹ جاری کیے جائیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ

جواب چھوڑ دیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.