متحد ہو کر بیرونی قابضین کو افغانستان سے نکال سکتے ہیں ، سراج الحق

137
اسلام آباد، امیر جماعت اسلامی پاکستان سراج الحق کا ملاقات کے بعدافغان امن کونسل کے وفد کے ساتھ گروپ فوٹو
اسلام آباد، امیر جماعت اسلامی پاکستان سراج الحق کا ملاقات کے بعدافغان امن کونسل کے وفد کے ساتھ گروپ فوٹو

لاہور(نمائندہ جسارت) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے افغان حکومت کے افغان امن کونسل کے اعلیٰ سطحی وفد سے ملاقات کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہاہے کہ ہم بین الا فغان امن مذاکرات کی حمایت کرتے ہیں ، ہماری حمایت کسی گروہ کے ساتھ نہیں بلکہ افغان قوم کے ساتھ ہے،تمام افغان گروہوں کو امن کی خاطر مذاکرات کی میز پر آنا چاہیے اور افغان مسئلے کا ایسا حل تلاش کرنا چاہیے جو تمام گروہوں کے نزدیک مبنی بر انصاف ہو اور افغان قوم کی امنگوں کے مطابق ہو ، افغان قوم متحد ہو کر بیرونی قابضین کو ملک چھوڑنے پر مجبور کر سکتی ہے۔ افغان وفد کی قیادت مولوی عطا اللہ لودین نے کی دیگر
ارکان میں مولوی عنایت اللہ ، عطا الرحمن سلیم ، مولوی عبدالحمید چکوئی ، مولوی محمد قاسم حلیمی و دیگر شامل تھے ۔اس موقع پر افغان سفارتخانے کے قائم مقام سفیر زردشت الشمس اور ان کے معاونین بھی موجود تھے ۔جماعت اسلامی کی جانب سے سینیٹر سراج الحق کے ساتھ پروفیسر محمد ابراہیم خان ، میاں محمد اسلم ، شبیر احمد خان اور آصف لقمان قاضی شامل تھے ۔ سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ جماعت اسلامی نے ہر دور میں افغانستان کی آزادی ، استحکام ، امن اور خوشحالی کی حمایت کی ہے ۔ ہم یہ سمجھتے ہیں کہ افغانستان میں امن کے قیام کے ساتھ نہ صرف پاکستان بلکہ پورے خطے کا امن اور ترقی وابستہ ہے ۔ انہوں نے کہاکہ افغانستان میں جنگ صرف افغان قوم کے دشمنوں اور دین اسلام کے دشمنوں کو فائدہ پہنچا ئے گی ، اس لیے تمام افغان گروہوں کو امن کی خاطر مذاکرات کی میز پر آنا چاہیے اور افغان مسئلے کا ایسا حل تلاش کرنا چاہیے جو تمام گروہوں کے نزدیک مبنی بر انصاف ہو اور افغان قوم کی امنگوں کے مطابق ہو ۔ افغان قوم متحد ہو کر بیرونی قابضین کو ملک چھوڑنے پر مجبور کر سکتی ہے ۔ انہوں نے افغانستان میں امن کے لیے افغان امن کونسل کی کاوشوں کی تحسین کی اور وفد کو جماعت اسلامی کی جانب سے مکمل تعاون کا یقین دلایا ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ