انضمام نے بیٹے کو انڈر19ٹیم میں منتخب کروانے کیلیے دباؤ ڈالنے کاالزام مستردکردیا

174

لاہور(جسارت نیوز)پاکستان کرکٹ بورڈ(پی سی بی)کے چیف سلیکٹر انضمام الحق تنازعات کی زد میں آگئے۔چیف سلیکٹرانضمام الحق کے حوالے سے اطلاعات گردش میں ہیں کہ انہوں نے جونیئر سلیکشن کمیٹی کے سربراہ اور سابق ٹیسٹ کرکٹر باسط علی کو فون کرکے کہا کہ آپ نے میرے بیٹے ابتسام الحق کو انڈر 19ٹیم میں شامل نہیں کیا۔ آئی این پی کے مطابق باسط علی نے یہ بات سابق ٹیسٹ کرکٹر عبدالقادر نے بتاتے ہوئے اس کی صداقت پر بھی اصرار کیا ہے۔ اسکینڈل باہر آنے پر باسط علی اور انضمام الحق نے ایسے فون کال کی تردید کردی جبکہ خبر دینے والے کرکٹر عبدالقادر اپنی بات پر قائم ہیں۔سابق کپتان عبدالقادر کا دعویٰ ہے کہ انڈر 19ایشا کپ میں بیٹے کے منتخب نہ ہونے پر انضمام الحق نے باسط علی سے فون پر شکوہ کیا۔ یہ بات عبدالقادر کو خود باسط علی نے بتائی۔کہانی کا دوسرا رخ یہ ہے کہ چیف سلیکٹر انضمام الحق اور جونیئر ٹیم چیف سلیکٹر باسط علی اس بات کی تردید کرتے ہیں۔ معاملہ اب پی سی بی کے جھولی میں آ گرا ہے جو نئے چیئرمین احسان مانی کے لئے پہلے اور کڑے امتحان سے کم نہیں۔دوسری جانب پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیف سلیکٹر انضمام الحق نے اپنے اوپر لگنے والے سنگین الزامات پر بورڈ سے تحقیقات کا مطالبہ کردیا۔بدھ کو ٹوئٹر پر جاری ایک ویڈیو پیغام میں دنیائے کرکٹ کے لیجنڈ نے اپنے متعلق اختیارات کے ناجائز استعمال کی خبروں کو افسوسناک قراردیا۔ویڈیو پیغام میں انضمام کا کہنا تھا کہ انہوں نے اپنے بیٹے کیلئے جونیئر سلیکشن کمیٹی کو کچھ نہیں کہا۔انہوں نے کہا کہ وہ اپنے آپ کو تحقیق کیلئے پیش کرتے ہیں اگر انہوں نے ایسا کیا ہے تو انہیں اس عہدے پر کام کرنے کا اختیار نہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ اگر کسی نے انہیں بدنام کرنے کی کوشش کی ہے تو اس کی بھی تحقیق ہونی چاہیے اور جو سزا انہوں نے اپنے لیے تجویز کی ہے وہی اس کیلئے بھی ہونی چاہیے۔قومی ٹیم کے سابق کپتان کا کہنا تھا کہ وہ چیئر مین پی سی بی کے پاس جا کر معاملے کی تحقیقات کا کہیں گے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ