انٹر بینک میں ڈالر 23 پیسے کے اضافے سے 223.90 روپے کا ہوگیا

202

 کراچی:انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر 23پیسے کے اضافے سے 223.90روپے کی سطح پر بند ہوئی جبکہ اسکے برعکس اوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کی قدر بغیر کسی تبدیلی کے 231.50روپے کی سطح پر بند ہوئی۔

ملک پر واجب الادا قرضوں کے بڑھتے ہوئے حجم اور نئے قرض حاصل کرنے امیدیں کم ہونے جیسے عوامل کے باعث پیر کو ڈالر کی پیشقدمی جاری ہے جس سے کاروباری دورانئیے میں ڈالر کے انٹربینک ریٹ ایک موقع پر 51پیسے کے اضافے سے 224.20روپے کی سطح پر بھی پہنچ گئے تھے۔

ماہرین کے مطابق پاکستان پر بیرونی قرضوں کا بوجھ بہت زیادہ بڑھ گیا ہے جنکی ادائیگیاں اب ایک مشکل ترین مرحلہ ہے اور اکتوبر 2023 تک پاکستان کو تقریباً 26ارب ڈالر کے بیرونی قرضوں کی ادائیگیاں کرنی ہیں جبکہ مالی سال 2022-23 سے مالی سال 2025 تک پاکستان کو مجموعی طور پر بیرونی قرضوں کی مد میں 73ارب ڈالر کی خطیر رقم ادا کرنی ہیں۔

اگر مذکورہ قرضے ری شیڈول نہ کیے جاسکے تو طویل المدت بنیادوں پر نادہندگی کے خطرات پیدا ہوسکتے ہیں۔

 دوسری جانب آئی ایم ایف کے ساتھ بھی معاملات طول اختیار کرتے جارہے ہیں حالانکہ موجودہ حالات میں پاکستان کی آئی ایم ایف پروگرام میں موجودگی وقت کی اہم ضرورت ہے۔