منشیات کی روک تھام کے لیئے وفاقی حکومت سرحدوں پر سختی کرے : وزیرعلی سندھ

142

کراچی:وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہاہے کہ منشیات موثر انداز میں تب رکے گی، جب وفاقی حکومت سرحدوں پر سختی کرے گی۔وزیرعلی سندھ سید مراد علی شاہ اوروفاقی وزیر برائے نارکوٹکس نواب زادہ شاہ زین بگٹی کی صدارت میں مشترکہ اجلاس ہوا،اجلاس میں وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے متعلقہ افسران نے بھی شرکت کی۔

وزیراعلی سندھ نے شاھ زین بگٹی اور ان کی ٹیم کو خوش آمدید کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے دو دن پہلے ایپکس کمیٹی کا اجلاس کیا تھا، جس میں منشیات کی روک تھام کیلئے فیصلے کئے گئے۔ منشیات موثر انداز میں تب رکے گی، جب وفاقی حکومت سرحدوں پر سختی کرے گی۔انہوں نے کہاکہ ہم تعلیمی اداروں میں منشیات کو روکنے کیلئے کام کر رہے ہیں۔

ملک میں 6.8 ملین لوگ منشیات استعمال کرتے ہیں، جو تکلیف دہ ہے۔وفاقی وزیر شاہ زید بگٹی نے کہا کہ ہم ڈرگ کو روکنے کیلئے سخت اقدامات کر رہے ہیں۔ بین الصوبائی اور بین الاقوامی سرحدوں پر نگرانی بڑھا رہے ہیں۔اجلاس میں جیلوںاور اسپتالوں میں نشے کے عادی لوگوں کی بحالی کیلئے یونٹس قائم کرنے پربھی اتفاق کیا گیا۔اس موقع پرایڈیشنل آئی جی کراچی نے اجلاس کو بریفنگ دی کہ منشیات اور کرائم آپس میں جڑے ہوئے ہیں۔

صوبے میں بیشتر مرد اور خواتین بھی منشیات کی مختلف اقسام استعمال کرتی ہیں۔ اسٹریٹ کرمنلز میں زیادہ تر نشے کے عادی ہیں۔بریفنگ کے مطابق جو ڈرگس استعمال ہو رہی ہیں ان میں چرس، بھنگ، ہیروئن، کوکین، کریک، ایمفیٹامائنز، کرسٹل، آئس اور دیگر شامل ہیں، جو بلوچستان کے مختلف راستوں سے آتی ہے۔

ان راستوں میں قمبر، لاڑکانہ، دادو، جام شورو اور کراچی شامل ہیں۔مزید بتایا گیا کہ بلوچستان میں کوئٹہ، سوراب، خضدار، ودھ، اوتھل، گڈانی، حب اور کراچی، پنجاب سے کشمور کے راستے شکارپور، لاڑکانہ، دادو اور جام شورو سے کراچی اور پنجاب سے صادق آباد اور کراچی براستہ پنوعاقل، سکھر، خیرپور، حیدرآباد، ٹھٹھہ سے کراچی پہنچتی ہے۔وزیر تعلیم سردار شاہ نے کہا کہ کراچی کے تعلیمی اداروں تک ڈرگس پہنچ گئی ہے۔

پرائیوٹ اسکول کی انتظامیہ اور حکومت کے تعلیمی اداروں میں طالب علم منشیات استعمال کر رہے ہیں۔ ہمیں اپنے بچوں کو بچانا ہے۔اجلاس میں وفاقی حکومت کی جانب سے اے این ایف کے فورس کمانڈر برگیڈیئر وقار حیدر، اے این ایف کے میجر محمد علی، عبدالسلام کھیتران شریک تھے۔

سندھ حکومت سے وزیر تعلیم سردار شاہ، وزیر برائے نارکوٹکس مکیش چاولہ، وزیر اطلاعات شرجیل میمن، مشیر قانون مرتضی وہاب، اسپیشل سیکریٹری رحیم شیخ، آئی جی جیل قاضی نذیر اور دیگر متعلقہ افسران نے شرکت کی۔