لاگت بڑھنے سے کاروبارکرنا صنعتیں چلانا انتہائی دشوار ہوگیا ، چیر مین پائما

102

کراچی (اسٹاف رپورٹر)پاکستان یارن مرچنٹس ایسوسی ایشن (پائما ) کے چیئرمین ثاقب نسیم،وائس چیئرمین سندھ بلوچستان ریجن محمد جنید تیلی نے بزنس کمیونٹی کے مطالبے کے باوجود اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے شرح سود میں کمی نہ کرنے پر گہری تشویش کا اظہارکرتے ہوئے کہا ہے کہ حال ہی میں شرح سود میں 150بیسس پوائنٹس کا اضافہ کیا ہے اور آنے والے دنوں میں شرح سود میں مزید اضافے کی خبریںگردش کررہی ہیں جس کے کورونا زدہ معیشت پر انتہائی منفی اثرات مرتب ہوں گے باالخصوص تجارت وصنعت کی پیداواری لاگت میں نمایاںاضافے کے ساتھ ساتھ مہنگائی کا طوفان آجائے گا۔ پائما رہنماؤں نے کہاکہ اقتصادی ماہرین کو معیشت کے مفاد میں تجاویز دینی چاہیے جس سے ملک میں کاروباری وصنعتی سرگرمیوں کو فروغ ملے اورخوشحالی آئے جبکہ یہ بات مشاہدے میں آئی ہے کہ حکومت کی جانب سے کیے گئے بیشتراقدامات سے کاروباری وصنعتی لاگت میں اضافہ ہوا ہے اور تاجروصنعتکار برادری کے لیے کاروبار وصنعتیں چلانا انتہائی دشوار ہوتا جارہاہے ۔انہوںنے کہاکہ کورونا وبا سے پیدا سنگین معاشی صورتحال میں تاجر وصنعتکا ر برادری کو پہلے ہی سرمائے کی شدید قلت کا سامنا ہے اور وہ اپنی بقا قائم رکھنے کے لیے سخت جدوجہد کررہے ہیںان حالات میں اسٹیٹ بینک کا شرح سود میں اضافہ کرنے سے شدید مالی بحران کا سامنا کرنا پڑے گا جو کسی صورت بھی ملکی معیشت کے حق میں نہیں۔ ثاقب نسیم، جنید تیلی نے مشیر خزانہ شوکت ترین سے اپیل کی کہ تجارت وصنعتوں کوتباہ ہونے سے بچانے کے لیے فوری طور پر شرح سود میں مناسب کمی کی جائے تاکہ تاجروں کوسرمائے کی باآسانی رسائی ممکن ہوسکے اور وہ تمام تر مشکلات کا مقابلہ کرتے ہوئے اپنا کاروبار اور صنعتی پیداواری سرگرمیاں جاری رکھ سکیں بصورت دیگر ان کے لیے کاروباری وپیداواری سرگرمیاں رکاوٹ کاشکار ہوجائیں گی جس کے معیشت پر انتہائی منفی اثرات مرتب ہوں گے۔