پھلوں کو پکانے والے کیلشئیم کاربائیڈ پر پابندی عاید

121

کراچی (اسٹاف رپورٹر)پھلوں کا زیادہ استعمال کرنے والے شہریوں کے لیے انتہائی تشویشناک خبر سامنے آئی ہے۔ کیلشئیم کاربائیڈ کیمیکل سے تیار کردہ پھل کینسر کا باعث بننے لگے ہیں۔ پھلوں کو پکانے والے کیلشیم کاربائیڈ نامی کیمیکل پر پابندی عاید کر دی گئی ہے۔ کچے پھلوں کو مصنوعی طریقے سے پکانے والا کیمیکل کینسر کا باعث بن سکتا ہے، یہ کیمیکل آم، آلوبخارا، خوبانی، کیلا، پپیتے، ٹماٹر اور آڑو میں بھی استعمال ہوتا ہے۔اس سلسلے میں سندھ فوڈ اتھارٹی کی جانب سے باقاعدہ اشتہار جاری کر دیا گیا۔ پھلوں کے کاروبار سے منسلک افراد کے لیے اطلاع عام جاری کیا گیا ہے۔ کم وقت میں کچے پھلوں کو کیمیکل سے تیار کرنا یا پکانے کا طریقہ جان لیوا ثابت ہوسکتا ہے۔پھلوں کو پکانے کے لیے کیلشئیم کاربائیڈ نامی کیمیکل کا استعمال کیا جاتا ہے۔ کیمیکل سے خارج ہونے والی ایسٹیلین گیس پھل پکنے کے عمل کو تیز کرتی ہے۔ پھل پکنے کے دوران یہ گیس پھلوں میں بھی جذب ہوجاتی ہے۔جدید تحقیق کے مطابق ایسٹیلین گیس نظام انہضام کو متاثر کرتی ہے، جو اعصابی کمزوری اور جگر کے مختلف امراض کا باعث بھی بنتی ہے۔ ادارے کا کہنا ہے کہ پھلوں کو پکانے کے لیے ایتھلین سے بنے رائپیننگ ایجنٹ کا استعمال کیا جائے۔ ہدایت پر عمل نہ کرنے والے عناصر کے خلاف فوڈ اتھارٹی قانونی کارروائی کرے گی۔