اے ایس آئی بلاول وسان کے قتل کی وجوہات سامنے آگئیں

78

خیرپور ( نمائندہ جسارت)اے ایس آئی بلاول وسان کو بے دردی سے قتل کے بعد لاش جلائے جانے کی وجوہات بھی سامنے آ گئیں۔ واقعے کا مقدمہ بلاول وسان کے قریبی عزیز وسیم وسان کی مدعیت میں 72 گھنٹے بعد درج کر لیا گیا ہے۔مقدمہ انسداد دہشت گردی کی دفعات کے تحت 3 نامزد ملزمان سمیت 6 افراد کے خلاف درج کیا گیا ہے، مقدمے میں ثقلین شاہ، فراز راجپوت اور اس کے والد زاہد راجپورت کو نامزد کیا گیا ہے۔ایف آئی آر کے مطابق اے ایس آئی بلاول وسان نے اپنے دوست فراز راجپوت کو 50 لاکھ روپے ادھار دے رکھے تھے، ادھار کی رقم واپس مانگنے پر ملزمان نے اے ایس آئی بلاول وسان کا قتل کیا۔ملزمان نے اے ایس آئی بلاول وسان کو بے دردی سے قتل کرنے کے بعد لاش کو گاڑی سمیت پیٹرول چھڑک کر آگ لگا دی۔گرفتار ملزمان فراز راجپوت اور ثقلین شاہ نے اعتراف جرم کر لیا ہے جبکہ ملزمان کو انسداد دہشتگردی کی عدالت میں پیش کر کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی جائے گی۔خیال رہے کہ 18 نومبر کی رات کو بھرگنی کے قریب سے جلی ہوئی ڈبل کیبن گاڑی سے اے ایس آئی بلاول وسان کی مکمل جھلسی ہوئی لاش ملی تھی۔