مساجد نہیں، شراب خانے بند کیے جائیں، قاری عثمان

96

کراچی (اسٹاف رپورٹر) جمعیت علما اسلام کی مرکزی مجلس شوریٰ کے رکن قاری محمد عثمان نے کہا ہے کہ آفات اور وبا کے موقع پر مساجد نہیں ،فحاشی کے اڈے بند کیے جائیں۔ شراب خانوں کو بند کرکے قرآنی مراکز کھولے جائیں تاکہ اعمال قرآنی سے علاج کیا جاسکے۔ ائمہ مساجد اور خطبا نماز جمعہ کے اجتماعات میں عوام کو احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا طریقہ سکھائیں۔ وہ اپنے دفتر میں مختلف علاقوں سے آئے ہوئے وفود سے گفتگو کررہے تھے۔ قاری محمد عثمان نے کہا کہ مساجد اور نمازوں پر پابندی لگانے کی باتیں عذاب الٰہی کو دعوت دینے کے مترادف ہے۔ ایسی سوچ قائم کرنے والے غیروں کے آلہ کار بن کر اللہ اور اسکے رسولؐ کے احکامات کے خلاف اعلان جنگ کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس جیسے مہلک امراض سے نجات کیلیے اعمال قرآنی اور مسنون دعاؤں کا اہتمام کرتے ہوئے رجوع الی اللہ اور توبہ استغفار، آیت کریمہ کا کثرت سے ورد کیا جائے۔ علاوہ ازیں قاری محمد عثمان نے قاضی فخر الحسن اور حافظ محمد نعیم کے ہمراہ آئی جی سندھ مشتاق مہر سے ملاقات کرکے انہیں آئی جی سندھ کا عہدہ سنبھالنے پر مبارکباد دیتے ہوئے ابتدائی طور پر کورونا وائرس سے نمٹنے کیلیے کیے جانے والے اقدامات کو سراہتے ہوئے اورکراچی کے بعض علاقوں میں پولیس اہلکاروں کی جانب سے دکانیں زبردستی بند کرانے کے واقعات سے آگاہ کرتے ہوئے کہاکہ اس دوران ہونے والے تشدد کا نوٹس لیا جائے اور شہر میں جہاں کاروبار بند کیا جائے وہاں فیکٹریوں کو بند نہ کیا جائے تاکہ اس بدترین مہنگائی کے مارے اور آفت زدہ عوام کو ریلیف مل سکے۔