وفاق کھاد کی قیمتیں کنٹرول کرنے میں ناکام رہا ہے ،جاوید قصوری

97
لاہور،امیرجماعت اسلامی پنجاب(وسطی) محمد جاوید قصوری،صوبائی دفتر منصورہ میں شیخوپورہ کے ضلعی ذمے داران کے اجلاس سے خطاب کررہے ہیں
لاہور،امیرجماعت اسلامی پنجاب(وسطی) محمد جاوید قصوری،صوبائی دفتر منصورہ میں شیخوپورہ کے ضلعی ذمے داران کے اجلاس سے خطاب کررہے ہیں

لاہور (نمائندہ جسارت) امیر جماعت اسلامی صوبہ وسطی پنجاب وصدر ملی یکجہتی کونسل وسطی پنجاب محمد جاوید قصوری نے کہا ہے کہ گندم کی کاشت سے قبل ہی ڈیلرز کی جانب سے ملک بھر میں ڈی اے پی، نائٹرو فاس اور یوریا کھاد کی قیمتوں میں فی بوری چار سو روپے تک اضافہ کرنا تشویش ناک اور قابل مذمت ہے۔زرعی ادویات کے ڈیلرز اوردکانداروں کے خود ساختہ اضافے سے کاشتکاروں کی مشکلات میں بھی اضافہ ہوگیا ہے۔ ڈی اے پی کی قیمت 3400سے بڑھ کر 3800نائٹر و فاس2600سے3ہزار اوریوریا 1750سے 2640روپے تک فروخت ہورہی ہے۔ وفاقی و صوبائی حکومتیں کھادوں کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے میں پوری طرح ناکام دکھائی دیتی ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز منصورہ میں ضلع شیخوپورہ کے ذمے داران کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکمران ہر محاذ ہر بری طرح ناکام ثابت ہوئے ہیں ۔ ہر شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والا شخص پریشان ہے۔ عوام کا کوئی پرسان حال نہیں۔ حکومت کی جانب سے حالت بہتر بنانے کے دعوے اور وعدے بھی ریت کی دیوار ثابت ہوئے ہیں۔ملک کی آبادی کی 70فیصد تک ضروریات پوری کرنے والا شعبہ زراعت بھی حکمرانوں کی بے حسی اور نااہلی کی بھینٹ چڑھ چکا ہے۔ انہوں نے کاشتکاروں کو خصوصی مراعات دینے ، پانی و بجلی کے بلوں میں خاطر خواہ ریلیف فراہم کرنے اور درپیش مسائل کو کسانوں کی دہلیز پر حل کرنے تک اس شعبے میں بہتری نہیں کرسکتی۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ حکومت سنجیدگی کا مظاہرہ کرے ۔ زبانی کلامی اقدامات سے کچھ نہیں ہوگا۔ محمد جاوید قصوری نے اس حوالے سے مزید کہا کہ ہر سال کاشتکاروں کی محنت کا صلہ مڈل مین اڑالے جاتے ہیں جبکہ حکومت کھیتوں سے فصلیں اٹھانے کے دعوے تو بہت کرتی ہے مگر عملاً کچھ نہیں ہوتا۔ یہی وجہ ہے کہ زراعت دن پر دن زوال پذیر ہوتی چلی جارہی ہے۔ دنیا کے تمام ترقی یافتہ ممالک شعبہ زراعت سے وابستہ افراد کو خصوصی مراعات فراہم کرتے ہیں۔ مگر بد قسمتی سے ہمارے ہاں معاملہ الٹ ہے ۔