ڈی سی حیدرآباد کی لیاقت یونیورسٹی اسپتال میں کھلی کچہری، مختلف شعبوں کا جائزہ

87

 

حیدرآباد(اسٹاف رپورٹر)سندھ ہائیکورٹ سرکٹ بینچ حیدرآباد کے حکم پر تشکیل دی گئی ڈسٹرکٹ ہیلتھ کمیٹی کے چیئرمین و ڈپٹی کمشنر حیدرآباد سید اعجاز علی شاہ نے لیاقت یونیورسٹی اسپتال حیدرآباد میں کھلی کچہری کی اور مختلف وارڈ ز سمیت دیگر ترقیاتی کاموں کا معائنہ کیا۔ان کے ہمراہ لیاقت یونیورسٹی اسپتال حیدرآباد کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر مبین احمد میمن، اے ڈی سی ون حیدرآباد محمد یوسف شیخ اور اسپتال کے ڈائریکٹر ایڈمن عبدالستار جتوئی سمیت مختلف ڈپارٹمنٹوں کے سربراہ اور نمائندے موجود تھے۔ ہیلتھ کمیٹی کے چیئرمین سید اعجاز علی شاہ نے اسپتال میں علاج معالجے کی سہولیات پر اطمینان کااظہار کرتے ہوئے اسپتال انتظامیہ کو ہدایت کی کہ سول اسپتال حیدرآباد جوکہ حیدرآباد سمیت دیگر اضلاع کا مرکزی اسپتال ہے یہاں سندھ کے دور دراز علاقوںسے مریض علاج کیلیے آتے ہیں لہٰذا زیر علاج اور طبی معائنے کیلیے آنے والے مریضوں کو زیادہ سے زیادہ سہولیات فراہم کی جائیں اور انہیں پتھالوجی ٹیسٹ سمیت ادویات اور دیگر سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔اس موقع پر اسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر مبین احمد میمن نے ڈسٹرکٹ ہیلتھ کمیٹی کے چیئرمین اور اراکین کو بتایا کہ سول اسپتال حیدرآبادمیں حال ہی میں 50بستروں کا ایک نیا جدید آئی سی یو قائم کیا گیا ہے جس میں سرجیکل آئی سی یو اور میڈیکل آئی سی یو میں تشویشناک حالت میں لائے گئے مریضوں کا علاج کیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ روڈ حادثات میں زخمی ہونے والے مریضوں کو تمام تر سہولیات کی فراہمی کیلیے ٹراما ٹولوجی ڈپارٹمنٹ قائم کیا گیا ہے جہاں متاثرہ مریضوں کو علاج کے ساتھ ساتھ سی ٹی اسکین ، پتھالوجی ٹیسٹ اور ماہر کنسلٹنٹ کی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ سندھ بھر میں اپنی نوعیت کا منفرد چائلڈ آئی سی یو بھی تعمیر کے مراحل میں ہیں جہاں تشویشناک حالت میں لائے جانے والے بچوں کا علاج کیا جائیگا۔ انہوں نے بتایا کہ سول اسپتال حیدرآباد میں حیدرآباد سمیت18اضلاع سے مریض علاج کیلیے آتے ہیں اور ان کی تعداد میں ہر آنے والے دن کے ساتھ اضافہ ہوتا جارہا ہے جس کے پیش نظر سول اسپتال حیدرآباد میں شام کی او پی ڈی بھی چلائی جارہی ہے جس میں روزانہ سینکڑوں کی تعداد میں مریض اپنے طبی معائنے کے علاوہ ادویات اور پتھالوجی ٹیسٹ کی سہولیات بھی حاصل کرتے ہیں۔ انہوں نے بتایاکہ اس وقت اسپتال میں 800بیڈ دستیاب ہیں ۔ ٹیکنیکل اسٹاف کی کمی کی وجہ سے مشکلات کا سامنا ہے ، گریڈ ایک سے لے کر 17تک کی 864منظور شدہ اسامیاں خالی ہیں جن پر مجبوراً ہاؤس جاب کرنے والے ڈاکٹر اپنی ذمے داریاں انجام دے رہے ہیں۔ اس موقع پر ڈپٹی کمشنر نے سول اسپتال حیدرآباد کی انتظامیہ کو یقین د ہانی کرائی کہ وہ اسپتال کے جائز مسائل کے حل کیلیے اعلیٰ حکام سے رابطہ کریںگے تاکہ اسپتال کی کارکردگی اور مزید بہترسے بہتر بنائی جاسکے۔