آرمی چیف تعیناتی پر صدر نے گڑبڑ کی تو نتائج بھگتنا پڑیں گے،  وزیرخارجہ

249

چئیرمین پاکستان پیپلز پارٹی اور وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ وزیراعظم جو بھی آرمی چیف تعینات کریں گے ہم ان کا ساتھ دیں گے۔ لانگ مارچ کا ان تاریخوں میں اعلان کا مقصد آرمی چیف کی تعیناتی کو متنازع بنانا ہے۔اگر صدر نے گڑبڑ کرنے کی کوشش کی تو پھر انہیں نتائج بھی بھگتا پڑیں گے۔

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ جمہوریت کی ترقی میں پیپلز پارٹی کا خون پسینہ شامل ہے۔عمران خان کا کرکٹر سے لے کر سلیکٹ ہونے تک کا سفر سب کے سامنے ہے۔پاکستان کی تاریخ سب کے سامنے ہے۔عمران خان کو ملک پر مسلط کیا گیا۔ گزشتہ 4 سال میں خارجہ پالیسی اور پاکستان کو نقصان پہنچایا گیا۔ سارا بوجھ پاکستان کے عوام اٹھا رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ روس یوکرین جنگ سے پوری دنیا کو معاشی تباہی کا سامنا ہے۔سابق وزیر اعظم کے فیصلے کی وجہ سے اتنا نقصان پہنچایا گیا کہ ڈیفالٹ کے خطرے میں ہیں۔مشرق وسطیٰ، یورپ سے لے کر امریکا تک تعلقات کو نقصان پہنچایا گیا۔ عمران خان کے نام نہاد لانگ مارچ کا کوئی جمہوری مقصد نہیں ہے، عمران خان نے پوری سیاست غیر جمہوری قوتوں کے کندھوں پر کی۔ ایک شخص کی انا کی وجہ سے ملک کو نقصان پہنچایا گیا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ خان صاحب اور ان ساری قوتوں کو پیغام دیتا ہوں اب یہ کھیل کھیلنا بند کر دیں۔ پاکستان اور عوام یہ کھیل افورڈ نہیں کرسکتے۔اگر حقیقی آزادی، جمہوریت مقصد ہے تو اسی ہفتے کو لانگ مارچ کے اعلان کو کیوں چنا؟۔ لانگ مارچ کے لیے پنڈی کو کیوں چنا گیا؟۔ خان صاحب کا مقصد ہے کہ ایک بار پھر ملک کی قسمت کے ساتھ کھیل کھیلا جائے۔ سیاست، احتجاج کرنا عمران خان کا حق ہے لیکن اس تقرری کو آئینی و قانونی طریقے سے مکمل ہونے دیں پھر سو بسم اللہ۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ اگر آپ اسی ہفتے پنڈی میں تماشا کریں گے تو پھر سب جانتے ہیں آپ کا مقصد کیا ہے، پہلے اور آج بھی اس سازش کو ناکام بنائیں گے، آپ سے درخواست کر رہے ہیں ایسی سیاست سے گریز کیا جائے۔جب تک ایسے کھلونے رہیں گے تو پھر ملک کو اسی طرح کا نقصان ہوتا رہے گا۔آپ ایک آئینی عمل کو متنازع بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان ایک بار پھر اس ملک کی قسمت سے کھیل رہے ہیں۔کوئی حقیقی آزادی کا نعرہ اور کوئی گھڑی سامنے لارہا ہے، خان صاحب سے اپیل کرتا ہوں ہوش کے ناخن لیں۔ایک ہفتہ مارچ کو آگے بڑھا دیں۔آرمی چیف کی تعیناتی کا اختیار وزیراعظم کا ہے۔ وزیراعظم جو بھی آرمی چیف تعینات کریں گے، سپورٹ کریں گے۔لانگ مارچ کا انہی تاریخ میں اعلان کا مقصد تعیناتی کو متنازع بنانا ہے۔عمران خان سیاست کے دائرے میں رہیں اس کھیل کا حصہ نہ بنیں۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ عمران خان لانگ مارچ اس تقرری سے لنک کر رہے ہیں، یہی وجہ ہے وہ پنڈی جانا چاہتے ہیں، جب ہم نے پنڈی جانا تھا تب ایسی کوئی تعیناتی نہیں ہو رہی تھی۔اگر جمہوریت کو نقصان پہنچے گا تو خان صاحب نہیں غیر جمہوری قوتوں کو فائدہ ہوگا۔ سیلاب کی وجہ سے صرف ڈسٹرکٹ میں یوم تاسیس منائیں گے۔ہماری ترجیح سیلاب متاثرین ہی ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ صدرعارف علوی کے پاس آخری موقع ہے اور امید ہے وہ آئین و قانون کے مطابق چلیں گے۔اگر صدر نے گڑبڑ کرنے کی کوشش کی تو پھر انہیں نیتجہ بھی بھگتا پڑے گا۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ روس سے گندم اور تیل عالمی مارکیٹ ریٹ کے مطابق خریدیں گے۔