بینکوں کی اکثریت جلد ڈیجیٹل زرمبادلہ کی سہولت مہیا کردے گی،اشرف خان

86

کراچی (اسٹاف رپورٹر)اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی بینکنگ سروسز کارپوریشن کے منیجنگ ڈائریکٹر محمد اشرف خان نے کہا ہے کہ مارچ 2020 میں آغاز کی گئی غیر ملکی زرمبادلہ کی ڈیجیٹلائزیشن میں بینکوں کی تعداد بڑھ کر 8 سے 13 تک پہنچ چکی ہے جبکہ بینکوں کی اکثریت کی جانب سے فروری کے اختتام تک زرمبادلہ کا 88 فیصد اور اپریل میں 98فیصد ڈیجیٹلائزکر دیا جائے گا اور جون 2021 کے بعد کاغذ پر مبنی گذارشات کو مکمل طور پر ختم کرد یا جائے گا۔ یہ بات انہوں نے پیر کو کراچی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری ( کے سی سی آئی ) کے دورے کے موقع پر اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اجلاس میں اسٹیٹ بینک کے ہیڈ آف فارن ایکسچینج آپریشنز شکیل محمد پراچہ، ڈائریکٹر ایکسچینج پالیسی ارشد محمود بھٹی، کے سی سی آئی کے نائب صدر شمس الاسلام خان، کے سی سی آئی کے بینکنگ و انشورنس سب کمیٹی کے چیئرمین قاضی زاہد حسین، مشیر بینکنگ و انشورنس سب کمیٹی عتیق الرحمن اور دیگر بھی شریک تھے۔محمد اشرف خان نے کہا کہ کاغذی کارروائی کو مکمل طور پر ختم کرکے اور مجموعی عمل کو تیز کرتے ہوئے تاجر برادری کے لیے آسانی پیدا کرنے کی غرض سے غیر ملکی زرمبادلہ کے آپریشن کو ڈیجیٹل بنانے کا اقدام اٹھایا گیا ہے جس پر کئی بینکوں نے کامیابی کے ساتھ عمل درآمد کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ہر چیز مینوئل سے ڈیجیٹل پروسیسنگ میں منتقل کردی گئی ہے اور صارفین کو آزادی ہے کہ وہ کسی بھی وقت بغیر کسی کاغذی کارروائی کے ترسیلات زر کی ترسیل کے لیے اپنے گھر یا دفتر سے آن لائن درخواست کرسکتے ہیں جبکہ صارفین کو اپنے رجسٹرڈ ای میل ایڈریس پر اس کے لین دین کے بارے میں تازہ ترین معلومات اور اعتراضات (اگر کوئی ہیں) موصول ہوں گے۔