کابل ہائی سیکورٹی زون کی مسجد میں دھماکا،امام سمیت 2 نمازی شہید،20 زخمی

59

کابل(مانیٹرنگ ڈیسک) افغانستان کے دارالحکومت میںسخت سیکورٹی زون کی مسجد کے اندر دھماکے میں معروف عالم دین ایاز نیازی ایک نمازی سمیت شہید ہوگئے۔افغان میڈیا کے مطابق دارالحکومت کابل کے گرین زون میں واقع مشہور ’وزیر اکبر خان مسجد‘ میں زوردار دھماکا ہوا ہے۔ دھماکے کے وقت مسجد میں معروف عالم دین ایاز نیازی اور نمازی موجود تھے۔ نماز امام ایاز نیازی نے پڑھائی جس کے بعد دھماکا ہوا اور مسجد کا ایک حصہ منہدم ہوگیا۔دھماکے میں مسجد کے امام ایاز سمیت ایک نمازی شہید جب کہ 20 افراد زخمی ہوئے جنہیں ریسکیو ادارے نے قریبی اسپتال منتقل کیا۔ زخمیوں میں سے 4 کی حالت نازک ہونے کے باعث ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔وزیر اکبر خان مسجد کابل کی معروف ترین مسجد ہے جہاں امام ایاز نیازی کے خطبات کو سننے کے لیے دور دور سے لوگ آتے ہیں جب کہ کابل انتظامیہ کے اہم رہنما بھی اسی مسجد میں نماز عیدین ادا کرتے ہیں۔ تاحال کسی گروپ نے حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔واضح رہے کہ کابل میں ایک اور دھماکے میں 4 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ دونوں دھماکوں میں دھماکا خیز مواد کا استعمال کیا گیا تھا جنہیں ریمورٹ کنٹرول ڈیوائس کے ذریعے ا±ڑایا گیا تھا۔افغانستان کے صدر اشرف غنی کے ترجمان نے اسے ایک گھناو¿نا حملہ قرار دیا۔واضح رہے کہ ہفتے کو ایک دھماکے میں صحافی اور ڈرائیور ہلاک ہو گئے تھے اور اس حملے کی ذمے داری داعش نے قبول کی تھی۔پیر کو صوبہ قندوز میں سڑک کنارے نصب بم پھٹنے کے نتیجے میں 7 شہری ہلاک ہوگئے تھے، اس حملے کی ذمے داری کسی نے قبول نہیں کی تھی لیکن صوبائی ترجمان عصمت اللہ مرادی نے اس حملے کی ذمے داری طالبان پر عائد کی ہے۔