اقوام متحدہ کے فنڈز رواں ماہ ختم ہو سکتے ہیں‘ سیکرٹری جنرل

43

نیو یارک (انٹرنیشنل ڈیسک) اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتیریس نے کہا ہے کہ عالمی ادارے کو تقریباً 23 کروڑ ڈالر کے خسارے کا سامنا ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ اقوام متحدہ کے مالی ذخائر رواں ماہ اکتوبر کے آخر تک ختم ہو سکتے ہیں۔ گزشتہ روز ادارے کے ملازمین کے نام ایک پیغام میں سیکرٹری جنرل نے واضح کیا کہ رواں سال کے آخر تک تنخواہوں کی ادائیگی یقینی بنانے کے لیے اقدامات کرنا لازم ہے۔ واضح رہے کہ اقوام متحدہ کے سیکرٹریٹ میں تقریباً 37 ہزار افراد کام کرتے ہیں۔ انتونیو گوتیریس کے مطابق سال کی آخری سہ ماہی کے دوران اخراجات کم کرنے کی غرض سے کانفرنسوں اور اجلاسوں کا التوا اور ادارے کی کئی خدمات میں کمی دیکھی جا سکتی ہے۔ سیکرٹری جنرل کا کہنا ہے کہ ابھی تک رکن ممالک نے 2019ء کے بجٹ میں درج سرگرمیوں کے لیے مطلوب مجموعی رقم کا صرف 70 فی صد ادا کیا ہے۔ اس حوالے سے گوتیریس نے 4 اکتوبر کو رکن ممالک کے نام ایک تحریر بھی ارسال کی ہے جس میں تفصیل سے بتایا گیا ہے کہ عمومی بجٹ کے تحت ہونے والی سرگرمیاں متاثر ہو رہی ہیں۔ اقوام متحدہ کے ایک ذمے دار نے بتایا کہ گوتیریس نے اس سے قبل رواں سال رکن ممالک سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ عالمی ادارے کے لیے فنڈنگ میں اضافہ کر دیں تا کہ مالیاتی مشکلات سے بچا جا سکے، تاہم رکن ممالک نے اس مطالبے کو مسترد کر دیا تھا۔