مغربی دنیا یہودیوں کے چنگل میں پھنسی ہوئی ہے،اسلاموفوبیا کا اصل کردار یہی یہودی ہیں

486

کراچی (رپورٹ: محمد علی فاروق) مغربی دنیا یہودیوں کے چنگل میں پھنسی ہوئی ہے‘ اسلامو فوفیا کا اصل کردار یہی یہودی ہیں‘ طاغوتی طاقتیں مغرب میں اسلام کی ترویج و اشاعت روکنے اور وہاں کے لوگوں کو اسلام سے دور رکھنے کے لیے سازش کے تحت مسلمانوں کو خوف، دہشت کی علامت طور پر پیش کر رہی ہیں ‘ اسلام کی سچائی اور سربلندی کے سامنے باطل نظام نہیں ٹھہر سکا‘ خاتم النبیینؐ کی آمدکے بعد سے ہی اسلامو فوبیا شروع ہوگیا تھا ۔ ان خیالات کا اظہار جماعت اسلامی کے رکن قومی اسمبلی مولانا عبدالاکبرچترالی، کراچی یو نیورسٹی کے پروفیسر ڈاکٹر محمد زبیر، کراچی یو نیورسٹی کی پروفیسر ڈاکٹر رانا صبا سلطان اور جماعت غربا اہلحدیث پاکستان کے سیکرٹری اطلاعات عمران احمدسلفی نے جسارت کے اس سوال کے جواب میں کیا کہ ’’ مغربی دنیا میں اسلامو فوبیا کے اسباب کیا ہیں؟‘‘ مولاناعبدالاکبر چترالی نے کہا ہے کہ مغربی دنیا یہودیوں کے چنگل میں پھنس گئی ہے‘ اسلام اور مسلمانوں کے بارے میں دنیا بالخصوص مغرب اسلاموفوبیا کا شکار نظر آتی ہے‘ یہودیوں کے زیر اثر طبقہ اسلام کے بارے میں مذہبی تعصب میں مبتلا ہے‘ اپنی تمام تر کوششوں کے باوجود بھی مغربی دنیا لاکھوں اہلِ مغرب کو مسلمان بنے سے نہ روک سکی اور مغربی تہذیب میں رہتے ہوئے مسلمانوںکی اکثریت اپنی ہی اسلامی تہذیب وتمدن سے جڑی نظر آتی ہے بلکہ مغرب میں مسلمانوں کے خلاف پر تشدد کارروائیوں کے باوجود مسلمان اللہ تعالیٰ کے علاوہ کسی سے خوف زدہ نہیں ہیں اور نہ ہی اپنے مذہب کو تبدیل کر رہے ہیں‘ یہی وجہ ہے کہ مغربی دنیا کے لوگ مسلمان اور اسلام سے تعصب کا شکار ہیں‘ یہودی مسلمانوں کے ازلی دشمن ہیںاوراسلاموفوبیاکا اصل کردار بھی یہودی ہیں اسی وجہ سے بلاوجہ جان بوجھ کر مسلمان اور اسلام کو نہ صرف تنقید کا نشانہ بنایا جاتا ہے بلکہ اسلام کو انتہا پسندی اور دہشت گردی سے جوڑ کر مسلم دنیا میں ایک خاص منصوبے کے تحت اشتعال انگیزی، نفرت، تشدد اور لاقانونیت کو بنیاد بنا کر ایک خاص سوچ اور فکر کو اجاگر کرنے کی کوشش کی جاتی ہے تاکہ مسلمانوں سے اہل مغر ب نفرت آمیز سلوک روا رکھیں‘ جب تک مغرب پر یہودیوں کی اجارہ داری رہے گی دنیا میں اسلاموفوبیا کا مسئلہ جاری ر ہے گا۔ پروفیسر ڈاکٹر محمد زبیر نے کہا کہ حضورؐکے زمانے سے لیکر عثمانیہ سلطنت تک دیگر اقوام مسلسل اس بات کو دیکھ رہی تھیں کہ وہ مسلمانوںکا کسی محاذ پر بھی مقابلہ نہیں کر پا رہی ہیں‘ ہر محاذ پر شکست کا سامنا ہے‘غیر مسلموں نے مسلمانوں پر تحقیق کی کہ مسلمانوں کو کس چیز نے متحد رکھا ہے اور وہ اس بات پر پہنچے کہ رسول اکرمؐکی مقدس ذات ہی اسلام ہے جو مسلمانوں کے اتحاد کی وجہ ہے ‘ غیر مسلموں نے باہم متحد ہو کر یہ فیصلہ کیا کہ اسلام کے عقیدے میں شکوک وشبہات پید ا کر دیے جا ئیں اور ان کے دل ودماغ سے حضور اکرم ؐ کی محبت، جذبہ جہاد کو ختم کیا جائے تو وہ مسلمانوں کا مقابلہ کر سکتے ہیں‘ مغرب اپنی بنائی ہوئی سازش میں کامیاب ہوگیا اور مسلمانوںکو مختلف گروہوں میں بانٹ دیا گیا‘ مگر ان تمام سازشوں کے باوجود بھی مغرب میں اسلام کو پھلتا پھولتا دیکھ کر اہل مغرب اسلامو فوبیا میں مبتلا ہوگئے ہیں اور اسلام کے خلاف پروپیگنڈے پر اتر آئے ہیں‘ بدقسمتی سے مغرب کی سازش کے تحت بننے والے مسلمانوں کے مختلف گروہ آج بھی اس پروپیگنڈے کا حصہ نظر آرہے ہیں۔پروفیسر ڈاکٹر رانا صبا سلطان نے کہا کہ میں سمجھتی ہوں کہ مغربی دنیا میں نائن الیون سے قبل اسلام تو تھا مگر اسلاموفوبیا نہیں تھا اس واقعے کے بعد اسلامو فوبیا کا استعمال کثرت سے کیا جانے لگا‘ مغربی دنیا کو خوف میں مبتلا کر دیا گیا ہے کہ اسلام سے تعلق رکھنے والے افراد انہیں نقصان پہنچانے کے لیے آئے ہیں یہی وجہ ہے کہ مغربی دنیا اسلام اور مسلمان سے خوف زدہ ہے‘ اسی خوف کا شکا ر ہوکر مغرب سے تعلق رکھنے والے افراد مسلمانوںکے خلاف بڑے جرائم میں ملوث پائے گئے‘ ڈنمارک مسجد میں گھس کر اسلامو فوبیا میں مبتلا شخص نے کئی افراد کو شہید کر دیا‘ اسی طرح یو کے میں تیز دھا ر آلے کی مدد سے مسلمانوںکو شہید کیا گیا‘ مغربی دنیا کے ذہنوں میں نائن الیون کے واقعے کے بعد بٹھا دیا گیا ہے کہ تمام دنیا کے مسلمان جرائم پیشہ ہیں‘ مسلمانوں میں کچھ ایسے عناصر نے جنم لے لیا جو دین اسلام سے واقف نہیں ہیں ان کا اپنا کوئی مذہب نہیں ہے یہ اسلام کو اپنے مقاصد کی تکمیل کے لیے ڈھال کے طور پر استعمال کر تے ہیں‘ یہ افراد اسلام کے لبادے میں شر پھیلاتے ہیں اور ایک دوسرے کے گلے کاٹ رہے ہیں‘ ایسے افراد کی مسلمانوں میں کوئی الگ سے پہچان تو نہیں ہے جس کی وجہ سے وہ دنیا میں اسلام اور مسلمانوں کی بدنامی کا ذریعہ بن رہے ہیں‘ مغرب میں اگر اس بات کا علم ہوجائے کہ میرا پڑوسی مسلمان ہے تو وہ خوف کی وجہ سے مسلمان کے گھر سے دور ہٹ کر گھر لینے کی کوشش کرتا ہے کہیں ایسا نہ ہوکہ مسلمان اُسے نقصان پہنچائیں‘ اس طرح کا امیج مسلمانوں کے لیے پیدا کر دیا گیا ہے جبکہ اسلام تو ہمیشہ اچھائی کا درس دیتا ہے‘ فتح مکہ کے وقت مشرکین مکہ اور قیدیوںکو رہا کر دیا گیا تھا‘ تشدد پسندی کی وجہ سے مغربی دنیا اسلامو فوبیا کا شکار ہوگئی ہے اور یہ لو گ یورپ سے مسلمانوں کو بے دخل کرنا چاہتے ہیں۔ عمران احمد سلفی نے کہا ہے کہ ہمیں ایسا محسوس ہو رہا ہے کہ اسلام فوبیا آج کے دور میں شروع ہوا ہے بلکہ یہ سلسلہ تو اللہ تعالی کے آخری پیغمبرؐ کے اسلام کی دعوت پیش کرنے کے ساتھ ہی شروع ہوگیا تھا‘ اہل ادیانِ باطل اسلام اور خاتم النبیینؐ کے آنے بعد سے آج تک خوف زدہ ہیں‘ اسلام کی سچائی اور سربلندی کے سامنے باطل نظام نہیں ٹھہرسکا‘ آج بھی مغربی دنیا میں اسلام مخالفین یہ محسوس کر رہے ہیں کہ اسلام مسلسل لوگوں کی توجہ کا مرکز بنا ہوا ہے اور14سو سال گزرنے کے باوجود اپنی سچائی ثابت کر رہا ہے‘مختلف مذاہب کے لوگ اسلام کے مطالعہ کے بعد اسلام کی طرف راغب ہو رہے ہیں‘ مغربی دنیا کو اس بات کا ادراک ہے کہ ایسے ہی چلتا رہا تو ایک دن اسلامی نظام دنیا میں غالب ہوجا ئے گا‘ طاغوتی قوتیں اسلام کو روکنے کے لیے مختلف طریقوں اور سازشوں کے ذریعے اسلام کو خوف، دہشت کی علامت بنا کر دکھا رہی ہیں تاکہ مغرب میں بڑھتی ہوئی اسلام کی طرف توجہ کے آگے بند باندھا جا سکے، یہی وجہ ہے کہ مغربی دنیا اسلاموفوبیا میں مبتلا اور خوف زدہ ہیں ۔