نوٹس پر اللہ کے سوا کسی سے معافی نہیں مانگوں گا،شاہد خاقان

122

اسلام آباد (نمائندہ جسارت/خبر ایجنسیاں) سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ ( ن) کے سینئر رہنما شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ نوٹس پر صرف اللہ سے معافی مانگوں گا اور کسی سے نہیں،چینی کا معاملہ سیدھا ہے وزیراعظم اور کابینہ کو بھی ڈیڑھ سال جیل میں ڈالیں پھر پتا چلے گا۔
ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہا کہ چیئرمین ای سی سی کو نیب بلائیں، صوبائی وزراکا کیا تعلق؟ گزشتہ دنوں جو کچھ ہوا وہ جمہوری ملک میں نہیں ہوتا، وزرا کی فوج ہے اورنوکریاں روز بدلی جاتی ہیں، آج معیشت اور خارجہ پالیسی زوال پذیر ہے۔ان کا کہنا تھا کہ عوام شناختی کارڈ ہاتھ میں اٹھا کر چینی خریدنے پر مجبور ہیں۔ انہوں نے کہا کہ شہباز شریف پر ابھی تک کوئی الزام ثابت نہیں ہوسکا، وزیراعظم اور کابینہ کو بھی ڈیڑھ سال جیل میں ڈالیں پھر پتا چلے گا۔سابق وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ کورونا کیسزمیں اضافہ ہو رہا ہے اور ہمارے پاس ویکسین نہیں، این سی او سی ناکام ہوچکی ہے، کسی کی جان محفوظ نہیں، ملک میں آج مہنگائی عروج پر ہے۔شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ امن وامان قائم کرنے کے ذمہ داران آج بھی ناکام ہیں، 23 کروڑ کا ملک خیرات میں ویکسین لے کر لوگوں کو لگا رہا ہے، حکومت کورونا ویکسین کا ایک ٹیکا نہیں خرید سکی۔ علاوہ ازیںاحتساب عدالت میںشاہد خاقان عباسی و دیگر کے خلاف ایل این جی ریفرنس میں شریک ملزم عمران شیخ کے وکیل نے گواہ پر جرح مکمل کرلی۔جمعرات کوشاہد خاقان عباسی عدالت میں پیش ہوئے ۔عدالت نے سماعت 27 اپریل تک کے لیے ملتوی کردی۔آئندہ سماعت پر شاہد خاقان عباسی کے وکیل گواہ پر جرح کریں گے۔