وفاقی کابینہ، تمام شوگر ملزکے آڈٹ کا فیصلہ‘ وزیراعظم مہنگائی پر برہم‘ کمیٹی بنادی

107

اسلام آباد(صباح نیوز+اے پی پی) وفاقی کابینہ کے اجلاس میں تمام شوگر ملز کے آڈٹ کرانے کا فیصلہ کیا گیاہے۔ 1985سے لے کر اب تک تمام شوگر ملز کا آڈٹ قومی احتساب بیورو(نیب)اور وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے)کرے گی، بدعنوانی کے مقدمات بھی ان ہی کو بھیجے جائیں گے۔ اسلام آباد میں وزیراعظم کی زیر صدارت کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں ملکی سیاسی، معاشی اور کورونا کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا جب کہ معاشی ٹیم کی جانب سے بجٹ سے متعلق کابینہ کو بریفنگ بھی دی گئی۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے ہدایت کی کہ کفایت شعاری کو اپنایا جائے اور غیر ضروری اخراجات ختم کیے جائیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ کابینہ نے قومی رابطہ کمیٹی کے فیصلوں کی توثیق کردی ہے، اس کے علاوہ اجلاس میں وفاقی بجٹ سے متعلق پیش رفت کا جائزہ لیا گیا۔کابینہ کو پی آئی اے طیارہ حادثے، تحقیقات اور میتوں کی شناخت کے عمل پر بریفنگ دی گئی،اس کے علاوہ کابینہ کو ملک بھر میں ٹڈی دل کے حملے کی صورتحال کے بارے میں بھی تفصیلات سے آگاہ کیا گیا۔ذرائع کے مطابق وفاقی کابینہ نے ایشیائی ترقیاتی بینک کواسلام آباد میں دفتر تعمیر کرنے کی اجازت دینے سمیت فنانشل مانیٹرنگ یونٹ کے ڈائریکٹرجنرل کی ڈیپوٹیشن پر تقرر اوریوٹیلیٹی اسٹور کارپوریشن کی ملازمت کو لازمی سروسز کا حصہ قرار دینے کی بھی منظوری دے دی ہے۔وفاقی کابینہ کے اجلاس میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا مہنگائی پر اثر نہ پڑنے پر وزیراعظم نے اظہار ناراضی کیا اور مشیر خزانہ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی۔ عبدالحفیظ شیخ مہنگائی میں کمی کے لیے صوبوں سے مشاورت کریں گے۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے ہدایت کی کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کافائدہ عوام کو پہنچایاجائے، وزیراعظم نے چینی کی قیمت میں بھی کمی کی ہدایت کی۔ذرائع کے مطابق کابینہ اجلاس میں سابق وزیراعظم نواز شریف کی لندن میں منظر عام پر آنے والی حالیہ تصویر کا بھی تذکرہ ہوا۔کابینہ ارکان نے موقف اپنایا کہ نوازشریف ملک کا بیڑاغرق کرکے باہر سیروتفریح کررہے ہیں۔اس موقع پر وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ایسے لوگوں کوشرم بھی نہیں آتی۔ذرائع کے مطابق کابینہ اراکین نے اجلاس میں گندم اسکینڈل کی رپورٹ کا فرانزک کرانے کا مطالبہ کیا۔ فواد چودھری، فیصل واوڈا اور مرادسعید نے گندم اسکینڈل کے ذمے داران کو سامنے لانے کامطالبہ کیا۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم اور وفاقی کابینہ نے احتساب کے عمل کو جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔عمران خان نے چینی کی قیمتوں میں کمی کی بھی ہدایت کر دی۔ کابینہ نے لبنیٰ فاروق ملک کو ڈائریکٹر جنرل فنانشل مانیٹرنگ یونٹ تعینات، شکیل احمد منگنیجو کو دسمبر 2020ء تک چیئرمین پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن،مسعود بنی کو منیجنگ ڈائریکٹر گورنمنٹ ہولڈنگز (پرائیویٹ) لمیٹڈ تعینات کرنے اور وسیم مختار(ایڈیشنل سیکرٹری پاور ڈویژن) کو چیف ایگزیکیٹو آفیسر سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی (گارنٹی) لمیٹڈ کا اضافی چارج دینے کی منظوری بھی دی۔علاوہ ازیں کابینہ نے کورونا سے حفاظت کے لیے مقامی طور پر تیار کیے جانے والے حفاظتی سامان (پی پی ای)، سینی ٹائزرز وغیرہ کی برآمد کی بھی منظوری دی۔