کراچی کو مزید تقسیم کرنے کی ہرسازش کا ڈٹ کامقابلہ کیاجائے گا، وسیم اختر

224

کراچی(اسٹاف رپورٹر)میئر کراچی وسیم اختر نے کہاہے کہ سیاسی مفادات کے لیے پہلے شہرکو6اضلاع میں تقسیم کیاگیااور اب لیاری اور گڈاپ نامی 2مزید اضلاع بنانے کی سازش ہورہی ہے،

یہ بات انہوں نے جمعہ کوکراچی سٹی تاجراتحاد کے بلدیاتی مسائل پر منعقدہ سیمینار میں مہمان خصوصی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہاکہ کراچی کو مزید تقسیم کرنے کی اب ہرسازش کا ڈٹ کامقابلہ کیاجائے گا،

میئر شپ اختیارات و حقوق کاترمیمی مسودہ تیارکرلیاگیاہے جس میں شہر کی تاجربرادری ساتھ دے۔مجوزہ ترامیم سے ایم کیو ایم کے فائدہ نہیں پہنچایا جارہاہے بلکہ ان ترامیم سے پورے شہر کو فائدہ ہوگا،

انہوں نے کہاکہ پیپلزپارٹی نے پورا کراچی شہر کو تباہ کردیاہے، تجارتی ایوانوں میں گیاتاجروں نے میری کوئی مدد نہیں کی۔مجھے میئر کے لیے ایم کیو ایم نے ضرور منتخب کیا لیکن میئر پورے کراچی کاہوں۔ شہر کے حالات سے تاجر برادری براہ راست متاثر ہورہی ہے۔میں بلدیاتی اداروں کی بحالی کے لئے عدالتوں میں موجود ہوں۔میں نے آنے کے بعد اعلیٰ عدلیہ کا سہارا لیاآرٹیکل 140اے کی پٹیشن داخل کی،

سپریم کورٹ نے بلدیاتی انتخابات کروائے۔ورنہ سیاسی جماعتیں بلدیاتی انتخابات نہ کرواتی۔ انہوں نے سپریم کورٹ سے درخواست کی کہ وہ بلدیاتی اداروں کے حقوق بھی بحال کرے۔ انہوں نے کہاکہ منتخب بلدیاتی نمائندوں نے اختیارات کے نہ ہونے کے باوجود اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے،میئر کراچی وسیم اختر نے کہاکہ اختیارات دینے کے حوالے سے اب گراؤنڈ بن رہا ہے اورجلد ہی کچھ نا کچھ ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ شہر کو پل اور انڈرپاسز نہیں بلکہ علاقوں کے بنیادی مسائل کاحل چاہئے، انہوں نے کہا کہ وفاق اور سندھ کو کراچی اور عالمی ڈونرزایجنسیوں سے اربوں روپے آئے لیکن ان سے کے سی آر نہیں چلتی۔ انہوں نے کہاکہ سپریم کورٹ کے سینئر ججز ازخود کراچی کے مسائل پر توجہ دے رہے ہیں،

سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے آل کراچی تاجر اتحاد کے چیئرمین حکیم شاہ نے کہاکہ چار سال سے چھوٹے تاجروں کے حقوق کی جنگ لڑی جارہی ہے۔چھوٹے تاجروں نے اپنا شہر سمجھتے ہوئے کئی علاقوں میں اپنی مدد آپ کے تحت بلدیاتی کام کرائے۔گلے شکوؤں کے بجائے مل کر شہر کی ترقی کے لئے کام کریں،

تاجر میئر کراچی کا ہاتھ بٹانے کے لئے تیار ہیں۔مارکیٹوں میں سیوریج اور اسٹریٹ لائٹس کے بڑے مسائل ہیں۔سیاست کو بالائے طاق رکھ کر شہر کی بہتری کے لئے کام کریں۔محدود اختیارات کے باوجود میئر کراچی نے آپریشن سے متاثرہ تاجروں کو متبادل جگہیں دیں،

بہت سے متاثرہ تاجر اب بھی متبادل جگہوں کے منتظر ہیں۔ٹھیلے پتھارے والوں کو بھی متبادل جگہیں دیں تاکہ کے ایم سی کاریونیو بڑھ سکے۔وزیر اعظم کیاقدامات صرف اعلانات تک محدود ہیں۔ وائس چیئرمین،آل سٹی تاجر اتحاد منصور جیک نے کہاکہ ہمیں کراچی اور پاکستان کے لئے سوچنا ہے،

میئر کراچی وسیم اختر شہر کے مسائل حل کرنے میں کوشاں ہیں۔ہم نے چھوٹے تاجروں کو پلیٹ فارم مہیا کیا۔ہم چھوٹے تاجر شہر کو بہت اوپر لے جا سکتے ہیں۔ ایف پی سی سی آئی کے نمائندہ میاں زاہد حسین نے کہاکہ ایم کیو ایم اور پی ٹی آئی حکومتی الائنس میں وفاق کراچی کو نظرانداز کررہاہے،

وفاق میئرکراچی سے تعاون کرے تو کراچی کے مسائل بحسن خوبی حل ہوسکتے ہیں۔ دنیا بھر میں میئر کو فادر آف سٹی کہاجاتا ہے تمام ادارے میئر کے ماتحت ہونے چاہئیں۔ میئر شہرکامنتخب نمائندے ہیں جنہیں اختیارات ملنے چاہئیں۔