پاکستان سپر لیگ5ویں ایڈیشن میں 3 سنچریاں اسکور ہوئیں

169

کرونا وائرس کی وجہ سے پاکستان سپر لیگ کے دونوں سیمی فائنلز منسوخ کر دیئے گئے۔ اب کب ہونگے اس بات کا اعلان پاکستان کرکٹ بورڈ بعد میں کرے گا۔
پاکستان سپر لیگ کے جو 30 میچ ابھی تک ہوئے اس میں ٖصرف3 کھلاڑیوں نے سنچریاں اسکور کیں ۔ اتنے ہی کھلاڑیوں نے ایک اننگ میں 90 رنزسے زیادہ اسکور بنانے کا اعزاز حاصل کیا۔
پاکستان سے تعلق رکھنے والے کامران اکمل نے پشاور زلمی کی جانب سے کھیلتے ہوئے کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے خلاف کراچی میں 22 فروری کو اس سیزن کی پہلی سنچری اسکور کی۔ انہوں نے 55 گیندوں پر13چوکوں اور 4 چھکوں کی مدد سے101رنز بنائے تھے۔ یہ میچ پشاورزلمی6 وکٹوں سے جیتی تھی۔
جنوبی افریقا سے تعلق رکھنے والے ریلی روزیو نے پاکستان سپر لیگ کے موجودہ سیزن میں دوسری سنچری بنائی۔ ملتان سلطانز کی جانب سے کھیلتے ہوئے کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے خلاف ملتان میں29 فروری کو ہوئے میچ میں انہوں نے44 گیندوں پر10 چوکوں اور6 چھکوں کی مدد سے آئوٹ ہوئے بغیر 100 رنز بنائے تھے۔ انہوں نے اننگ ختم ہونے سے 2گیندیںقبل اپنی سنچری43 گیندوں پر مکمل کی تھی جو پاکستان سپر لیگ میں اب تک سب سے تیز سنچری ہے۔ اس میچ میں ملتان سلطانزکو30 رنز سے کامیابی حاصل ہوئی تھی۔
کریس لین نے موجودہ پاکستان سپر لیگ میں سب سے بڑی اننگ کھیلنے کا اعزاز حاصل کیا ۔ جنوبی افریقاسے تعلق رکھنے والے بلے باز نے لاہور قلندرز کی جانب سے کھیلتے ہوئے ملتان سلطانز کے خلاف لاہور میں15 مارچ کو ہوئے میچ میں55 گیندوں پر12 چوکوں اور8چھکوں کی مدد سے آئوٹ ہوئے بغیر113 رنز بنائے تھے اور ٹیم کو میچ میں9 وکٹ سے کامیابی دلائی تھی۔
آسڑیلیا سے تعلق رکھنے والے لاہور قلندرz کے بین ڈنگ نے لاہور میں8 مارچ کو کراچی کنگس کے خلاف 40 گیندوں پر3 چوکوں اور12 چھکوں کی مدد سے آئوٹ ہوئے بغیر99 رنز بنائے تھے۔ میچ کے آخری اوور میں لاہور قلندر کو 4 رنز درکار تھے اور بین ڈنک93 رنز پر بلے بازی کررہے تھے۔کیمرون ڈیلپورٹ آخری اوور کرانے آئے تھے۔ پہلی ہی گیند پر بین ڈنک نے شاندار چھکا لگاکر ٹیم کو تو جیت دلادی مگروہ ٹوئنٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں پہلی سنچری سے محروم رہے۔12 چھکوں کے ساتھ وہ پاکستان سپر لیگ میں وہ ایک اننگ میں سب سے زیادہ چھکے لگانے کا اپنا ہی ریکارڈ بہتر کرنے میں کامیاب رہے ۔ اس سے پہلے انہوں نے کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے خلاف لاہور میں اپنی 93 رنز کی اننگ میں 3 مارچ کو10 مرتبہ گیند کو بائونڈری لائن کے باہر کی سیر کرائی تھی۔
محمد حفیظ 2 رنز کی کمی کیوجہ سے ٹوئنٹیٹوٹئنٹی کرکٹ میں اپنی تیسری سنچری سے محروم رہے۔ انہوں نے لاہور قلندرز کی جانب سے اسلام آباد یونائٹیڈ کے خلاف لاہور میں23 فروری کو کھیلے گئے میچ میں57 گیندوں پر7 چوکوں اور اتنے ہی چھکوں کی مدد سے آئوٹ ہوئے بغیر98 رنز بنائے تھے۔ انکی اس شاندار اننگ کے باوجودلاہور قلندر کو ا ایک وکٹ سے شکست ہوئی تھی۔