ظہیر خان

2 مراسلات 0 تبصرے

راحت اندوری … ’’عجب آزاد مرد تھا‘‘۔

زمانہ بڑے شوق سے سن رہا تھا ہمی سو گئے داستاں کہتے کہتے راحت اندوری ابدی نیند سوگئے۔ انّا للہِ و انّا الیہ راجعون۔ صرف ہندوستان...

’’دیکھنا اک دن عنایتؔ جا بسے گا زِیرخاک‘‘

دل یہ کہتا ہے کہ تو مظرابِ سازِ زیست ہے چل بسا تو سازِ ہستی بے صدا ہو جائے گا کیسے کیسے لوگ خاموشی سے اٹھ...
پرنٹ ورژن
Friday magazine