ڈبہ پیک کھانے بھوک میں اضافہ کیوں کرتے ہیں؟

114

حالیہ تحقیق نے ثابت کیا ہے کہ پہلے سے تیار شدہ کھانے نہ صرف موٹاپے کا باعث بنتے ہیں بلکہ یہ صحت کے لیے بھی نقصان دہ ہوتے ہیں۔
تیارشدہ کھانا کاربوہائیڈریٹ، چربی، شکر اور نمک کے مخصوص تناسب کے ساتھ تیار کیا جاتا ہے، جس سے قدرتی کھانے کی اشیا کے مقابلے میں ان میں کیلوریز کی تعداد پانچ گنا زیادہ ہوجاتی ہے۔
کیلوریز کا فرق:
Metabolism Cell رسالے میں شائع ہونے والی ایک تحقیق میں تیار شدہ اور قدرتی کھانے کے درمیان کیلوریز کے فرق کا موازنہ کیا گیا ہے۔ اس میں بتایا گیا ہے کہ اس قسم کے کھانے کھانے والے افراد بہت زیادہ کھاتے ہیں اور ان کے وزن میں اضافہ ہوجاتا ہے۔
اس میں شرکا کو دو گروپ میں تقسیم کیا گیا تھا۔ پہلا، جو تیار شدہ اور ڈبے والے کھانے مثلاً دودھ، فاسٹ فوڈ، سبزیوں والے گھی کے ساتھ بلوبیری کیک وغیرہ پر انحصار کرتا تھا۔ دوسرا گروپ وہ تھا جو قدرتی اور تازہ کھانوں پر انحصار کرتا تھا جیسے دہی، سیب، کیلے اور اخروٹ وغیرہ۔
شرکا کو دن میں تین کھانوں کے علاوہ بوتل کا پانی، پروسیس شدہ نمکین ہلکے کھانے بھی دیے جاتے تھے اور جسے وہ اپنی مطلوبہ مقدار میں کھا سکتے تھے۔
دو ہفتوں کے بعد محققین نے دیکھا کہ تیار شدہ کھانا کھانے والے گروپ کا وزن بڑھنے لگا، جب کہ دوسرے گروپ میں شریک افراد کا وزن چند کلو گرام کم ہوگیا۔
کھانا چبانا:
اس تحقیق میں کھانے کو پُرسکون طریقے سے کھانے اور اس کو اچھی طرح سے چبانے کی اہمیت کا بتایا گیا ہے۔ کیوں کہ محققین کے مطابق جلدی کھانے سے استعمال شدہ مقدار میں اضافہ ہوتا ہے، خاص طور پر تیارشدہ کھانے جو انسان خود تیار نہیں کرتا، وہ خاصی مقدار میں کھا جاتا ہے۔
محققین کے مطابق اس کے نتائج حیرت انگیز نہیں تھے، کیوں کہ تیار شدہ کھانوں میں کیلوریز کی مقدار زیادہ اور پانی کی کمی ہوتی ہے، جس کی وجہ سے پیٹ کم بھرتا ہے اور بھوک ختم نہیں ہوتی۔ تیار شدہ کھانوں میں اکثر چینی، سوڈیم اور چربی کی کثرت ہوتی ہے۔ ان کھانوں میں آلو کے چپس، سوفٹ ڈرنک، بیکڈ سامان اور فاسٹ فوڈ شامل ہیں۔
فائبر:
غذائی اجزا سے مالا مال گھر کا پکا ہوا کھانا فاسٹ فوڈ کا بہترین متبادل ہے، اور جب تازہ پھل دستیاب نہ ہوں تو پیک پھلوں کا استعمال کیا جا سکتا ہے۔ ماہرین تجویز دیتے ہیں کہ ناشتے میں فائبر شامل کریں اور جَو اور دودھ کی مصنوعات کھائیں۔ اس کے علاوہ سبز پتوں والی سبزیاں اور اناج کھائیں۔
بہتر یہ ہے کہ شکر، چربی اور سوڈیم سے بھرپور غذائیں کھانے سے اجتناب کریں جو جسم کی قوتِ مدافعت کو کمزور کرتی، اور بیماری کا خطرہ بڑھاتی ہیں۔

حصہ