موسمِ سَرما کی غذائیں

78

حکیم ضیاء الرحمن سندھو
موسم سرما میں بھوک خوب لگتی ہے اور خوب کھایا بھی جاتا ہے۔ سردیوں میں پھل، سبزیاں، میوہ جات، اجناس اور مسالے وغیرہ وافر مقدار میں پائے جاتے ہیں۔ گرما کی نسبت سرما میں ہر چیز کھانے کا اپنا ہی ایک لطف ہوتا ہے۔ چاہے گوشت کھائیں یا مچھلی، دونوں بغیر فریج کے بھی خراب نہیں ہوتے۔ موسم سرما کی خاص سوغاتوں میں صحت بنانے والی بے شمار اشیاء وافر مقدار میں دستیاب ہوتی ہیں۔ مونگ پھلی، چنے، تل کے لڈو وغیرہ ہر ایک کی قوتِ خرید میں آجاتے ہیں۔ ابلے ہوئے انڈے اور چکن سوپ کے علاوہ گاجر کا حلوہ بھی اس موسم کی خاص سوغات ہے۔ کینو، موسمبی، نارنگی، مالٹا، سیب، کیلے، گنا، امرود، پپیتا، ناریل، بیر، شکر قندی، سنگھاڑا اور آملہ وغیرہ صحت کے ساتھ ساتھ صاف خون کی فراہمی کے بھی ضامن ہوتے ہیں۔
موسم سرما میں شہد بھی بے حد فائدہ دیتا ہے۔ چلغوزہ، اخروٹ، خوبانی (خشک)، میوے والا گڑ عام استعمال ہوتا ہے۔ مارجرین، مکھن، بالائی کا بھی بے دریغ استعمال کیا جا سکتا ہے۔ موسم سرما میں بنائی گئی صحت سارا سال قائم رہتی ہے۔ اگر آپ کو صحت بنانی ہے تو موسم سرما میں ملنے والی ہر شے سے انصاف کریں۔ کھائیں، پئیں اور ورزش بھی ضرور کریں۔ نیند تو ویسے بھی اس موسم میں بہت آتی ہے اور نرم گرم لحافوں میں گھس کر آرام کرنے، چائے، کافی، سوپ پینے کا ایک الگ ہی مزہ ہے۔ ماہرینِ غذا اور طب کا کہنا ہے کہ قابلِ رشک صحت کا راز ریشہ دار غذائوں کے استعمال میں ہے، یعنی فائبر نہ صرف یہ کہ امراضِ قلب سے محفوظ رکھتا ہے بلکہ بڑھتے وزن پر بھی ان غذائوں سے قابو پایا جا سکتا ہے۔ ماہرینِ صحت کے مطابق روزانہ ایسی غذائیں کھائیں جن میں 30 گرام ریشے موجود ہوں، ایسا اناج استعمال کیا جائے جس میں چھلکا ہو اور اس کا چھلکا الگ نہ کیا گیا ہو۔ ریشہ دار غذا ذیابیطس، فشارِ خون کی زیادتی میں کمی کے علاوہ جسم کے بنیادی اعضا کے افعال پر بھی صحت مند اثرات مرتب کرتی ہے۔
پھل، سبزیاں، اناج میں کبھی کبھی جوار، باجرہ، مکئی کا آٹا ملا کر اور تنہا بھی استعمال کریں، مثلاً روٹی کی شکل میں، چورا کی شکل میں، ملیدہ کی شکل میں دلیہ کا استعمال کریں۔ اسپغول کھائیں، ثابت مسور، مونگ، لوبیا، مٹر، چھلکے والی دالیں کھائیں۔ چنے چھلکے سمیت کھائیں، مکئی اور بھٹے کھائیں۔ سویابین کا استعمال کریں۔ مولی، گاجر، شلجم، چقندر، سرسوں، میتھی، پالک، باتھوا اور چولائی کا ساگ موسم میں کم از کم دو تین بار ضرور کھائیں۔ بند گوبھی، شکر قندی، توری، کریلا، سیم، کچنار، لوبیا اور سہانجنہ کی پھلیاں بھی ایک سے دو تین یا چار بار موسم میں استعمال ضرور کریں۔ پیٹھا (کدو میٹھا)، زیتون، چنے ابال کر، بھون کر کم از کم ایک بار موسم سرما میں ضرور استعمال کریں۔ گوشت میں بکرے کا گوشت مفید ہے۔ سالم اناج سے تیار کردہ حلیم، کھچڑا اور میتھی دانے کی کھچڑی بھی صحت کے ساتھ ساتھ موسم کی شدت سے بچائے گی۔ روزمرہ کی خوراک میں دودھ، گوشت کے علاوہ اناج اور نمک و حیاتین کے مقررہ حرارے بھی ضرور شامل کریں۔
مچھلی کا وافر استعمال کریں، مچھلی کا تیل استعمال کریں۔ سائنس دانوں، معالجین اور ماہرینِ صحت کا کہنا ہے کہ انڈے، مرغی کے چوزے، دودھ، مکھن اور بادام کے علاوہ سویابین، چنے، مٹر، کشمش، پستہ، اخروٹ، پنیر، مکئی، جو، سیب، آم، انگور وغیرہ کا دماغی قوت بڑھانے کے لیے استعمال کریں۔ ان سب میں فاسفورس وافر مقدار میں پایا جاتا ہے اور فاسفورس دماغی تقویت اور ترقی کے لیے مفید ہے۔

حصہ