اے شاعرِ مشرق۔۔۔اے اقبال

تجھے ایک چمن کا بکھرنا گوارا نہ تھا

مگر آج تیرا خواب بکھر گیا ۔۔۔

اسلامی مملکت کا خواب ۔۔۔

جہاں مسلمان آزادانہ اپنے مذہب کی پیروی کریں گے ۔۔

جو اسلام کی تجربہ گاہ ہوگی ۔۔۔

جہاں کا سربراہ حضرت عمر ؓ جیسا خلیفہ ہو گا۔

جہاں سے قرطبہ کی جانب لشکر نکلیں گے،

جہاں سے بیت المقدس کے محافظ اٹھیں گے ۔۔۔

اے اقبال ۔۔۔

وہ تیرے شاہین ۔۔۔

جن کی بلند پرواز و نگاہ کو اشعار میں ڈھالا تھا ۔۔۔

جن کے جھپٹنے میں باطل کی بربادی تھی ۔۔۔

وہ مغربی تہذیب کا نقشہ ۔۔۔

اب گماں ہوتا ہے کہ وہ یورپ کا نہیں،

تیرے وطن کا نقشہ ہے ۔۔۔

وہ سرور و رقص کی محفلیں ۔۔۔

تیرے شاہین سجاتے ہیں ۔۔۔ تیرے وطن میں سجاتے ہیں ۔۔۔

اے اقبال ۔۔۔

تیرا وطن ہم نے کھو دیا ۔۔۔

تیرا خواب تعبیر نہ کر سکے ۔۔۔

تیرے الفاظ پڑھ کر لہو نہیں گرماتا،

کیونکہ تیرے الفاظ کتابوں سے مٹا دیے گئے ۔۔

اور جو کچھ رہ گئے، تو معانی و مفہوم بدل گئے ۔۔۔

تجھے ایک چمن کا بکھرنا گوارا نہ تھا،

مگر آج تیرا خواب بکھر گیا ۔۔۔ !

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حصہ

1 تبصرہ

Leave a Reply to Atiq جواب منسوخ کریں