پی ٹی آئی کی صوبے کے تاریخ کی ناکام ترین حکومت تھی، عنایت اللہ خان

227

پشاور: نائب امیرجماعت اسلامی خیبرپختونخواہ و سابق سینئر صوبائی وزیر عنایت اللہ خان نے کہا ہے کہ تحریک انصاف حکومت صوبے کے تاریخ کی ناکام ترین حکومت تھی،صوبائی حکومت ڈیلیور نہ کر سکی ،ریکارڈ قرضہ لیا ،عوام نے جو مینڈیٹ دیا خیبرپختونخواہ حکومت اس پر پوری نہ اتری۔

عنایت اللہ خان نے کہا کہ صوبہ ٹیکنیکلی ڈیفالٹ ہو چکا ،تحریک انصاف حکومت کی بیڈ گورننس کی وجہ سے صوبے کی معیشت کو مکمل طورپر تباہ کرکے رکھ دیاگیا،ساڑھے چار سال تک بدعنوانی اور خراب طرز حکومت کا راج تھا 30 جون  2023سے قرضہ ایک ہزار ارب سے زائد ہو جائیگا۔

رہنما جماعت اسلامی پاکستان کا کہنا تھا کہ  صوبہ پی ٹی آئی کے لیے بھی  غیر محفوظ ،ارکان اسمبلی نے بھتے د ئیے، 2018 کی نسبت دہشتگردی میں بہت اضافہ ہوا،وزرا خود بھی محفوظ نہیں،محمود خان دور میں کوئی بڑا منصوبہ شروع نہیں کیا گیا ۔وفاق نے قبائلی اضلاع کیلئے صوبائی حکومت کو 357 ارب روپے ادا کئے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ رواں سال 30 جون تک صوبائی حکومت کی مالیت 1 ہزار ارب سے بڑھ جائیگی۔ کوٹوں ہیڈرو پاور سٹیشن کو 2019 میں مکمل ہونا تھا، تاحال نہ ہوسکا،   پانچ سال کے اندر 187 سیکرٹریز تبدیل ہوئے ۔چار چیف سیکرٹری چار آئی جیز تبدیل ہوئے ۔ صوبہ پی ٹی آئی کے لیے بھی  غیر محفوظ ہے  ارکان نے بھتے دیے۔  صوبے کے معیشت کو تباہ کردیا اس وقت ایک عشاریہ  تین ٹریلین تھرو فاروڈ ہ  ۔ پورے صوبے میں کوئی بڑا پراجیکٹ نہ شروع کیا اور نہ مکمل کیا گیا ہے ۔