حکومت کے پاس پیسے ہی نہیں، بینکوں میں کیارکھیں، اسحاق ڈار

132
no money

کراچی: وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ اسلامی بینکنگ نظام کے ساتھ پاکستان کی معیشت کو بھی بھنور سے نکالنا ہے، حکومت کے پاس پیسے ہی نہیں تو بینکوں میں کیسے رکھے گی؟۔

وفاقی وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ پاکستان میں اسلامک بینکنگ نظام کامیاب ہے،سود سے بچنا پاکستان کےلئے بہت اہم ہے،اسلام نے بھی سود دینے یا لینے پر پابندی عائد کی ہے،اسلامک بینکنگ نظام کےذریعےشفاف لین دین کو یقینی بنایاجاسکتاہے،ملک کا مالیاتی نظام معاشی ترقی کےلئےاہم ہوتا ہے، موجودہ دورہ میں بینکاری خدمات کا استعمال جدید دورکی ضرورت بن چکا ہے۔یہ باتیں انہوں نے کراچی میں منعقدہ حرمت سود سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہیں۔

اسحاق ڈار کا کہنا تھا کہ آج کی تقریب میں شرکت میرے لیے باعث ثواب اوراعزاز ہے، شرعی عدالت کے سو د کےخاتمے کیلئے فیصلے کاخیرمقدم کرتے ہیں، پاکستان کی معیشت اور مستقبل کےلیے اہم پیش رفت ہے، جب یہ فیصلہ آیا تو بیرون ملک تھا، میں نےنیت کی کہ جب بھی پاکستان جاؤں گا تو پہلا کام یہ اپیلیں واپس کرانا ہونگی۔

ان کاکہنا تھا کہ پاکستانی معیشت کو بھنور سے نکالنے کیلئے دعاؤں،دواؤں کی ضرورت ہے، مجھے مفتی تقی عثمانی نے کہا کہ حکومت اپنا پیسہ اسلامی بینکوں میں رکھے، انہیں بتانا چاہتا ہوں کہ حکومت کے پاس تو پیسہ ہی نہیں تو بینکوں میں کیسے رکھےگی؟ ہم اپنی آمدنی سے زیادہ خرچ کرنے کے عادی ہوچکے ہیں، ہمیں آمدنی سے زیادہ اخراجات پر کنٹرول کرنے کی ضرورت ہے۔